1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

پناہ دینے کے فیصلے منصفانہ اور انفرادی، ریڈ کراس کا مطالبہ

جرمن ریڈ کراس کے صدر نے جرمنی میں پناہ کی درخواستوں کے جائزہ لینے کے لیے منصفانہ طریقہء کار اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ فلاحی ادارے کے صدر نے پناہ کی درخواستوں کا انفرادی جائزہ لینے کی بھی حمایت کی ہے۔

جرمن ریڈکراس کے صدر رُوڈولف زائٹرس نے جرمنی میں پناہ گزینوں کی درخواستوں پر فیصلے کرنے میں منصفانہ طریقہ کار اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

زائٹرس کا یہ بھی کہنا تھا کہ سیاسی پناہ کی درخواستوں پر فیصلوں میں نہ تو کسی ملک کی طرف سے مہاجرین کی زیادہ سے زیادہ تعداد کے بارے میں طے کردہ کسی حد بندی کو کوئی کردار ادا کرنا چاہیے اور نہ ہی ان تمام تارکین وطن کو عمومی طور پر مشکوک سمجھا جانا چاہیے جن کے پاس کوئی شناختی یا سفری دستاویزات نہیں ہیں۔

زائٹرس نوّے کی دہائی کے اوائل میں جرمنی کے وفاقی وزیر بھی رہ چکے ہیں۔ سابقہ سیاست دان کا تعلق کرسچن ڈیموکریٹک پارٹی سے تھا تاہم اب وہ جرمن ریڈ کراس کے سربراہ ہیں۔

Rudolf Seiters (DRK)

رُوڈولف زائٹرس جرمن ریڈ کراس کے صدر ہیں

جرمنی کے کلیسائی نیوز ایجنسی ای پی ڈی سے کی گئی ایک گفتگو میں ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ تارکین وطن کی یورپی یونین کے رکن ممالک میں تقسیم کے منصوبے پر عمل درآمد ہونا چاہیے۔ زائٹرس کے مطابق، ’’یورپی یونین کو مہاجرین کے مسئلے پر مشترکہ حکمت عملی اختیار کرنا چاہیے۔ تاہم جرمنی میں تارکین وطن کی زیادہ سے زیادہ حد مقرر کرنے سے مسئلہ حل نہیں ہو گا۔‘‘

حکومتی اتحاد میں شامل سیاسی جماعت سی ایس یو کی جانب سے حال ہی ایسے مطالبات کیے گئے تھے کہ شناختی دستاویزات کے بغیر کسی بھی تارک وطن کو جرمنی آنے کی اجازت نہ دی جائے۔ زائٹرس نے اس بارے میں کیے گئے ایک سوال کا محتاط انداز میں جواب دیتے ہوئے کہا، ’’یہ نئی تجاویز ہیں جن کے بارے میں سیاست دانوں کو تفصیلی طور پر غور و فکر کرنا چاہیے۔‘‘

جرمن ریڈ کراس کے صدر نے اپنے ادارے کے کردار کے حوالے سے بتایا، ’’ایک فلاحی ادارے کے طور پر ہلال احمر ایک مہذب طریقہ کار اختیار کرنے کے لیے جدوجہد کرتی رہے گی۔‘‘

DW.COM