1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پروازوں پر پابندی میں نرمی، جنوبی ایشیا میں پھنسے مسافر پر امید

آئس لینڈ میں پھٹنے والے آتش فشاں کی راکھ کے باعث یورپ بھر کی فضائی حدود پانچ روز تک پروازوں کے لئے بند رہیں۔ آج تمام یورپی ہوائی اڈوں پر بتدریج پروازوں پر پابندی میں نرمی کرنے کے اقدامات پر عملدرآمد شروع کر دیا گیا۔

default

یہ اقدامات جنوبی ایشیا میں پھنسے ہوئے ہزاروں مسافروں کے لئے بھی امید کی علامت ہیں۔

NO Flash Flugverbot Flughafen Vulkan

پابندی کے باعث جرمنی کے فرینکفرٹ ہوائی اڈے پر جہاز پارکنگ ایریا میں

آج علی الصبح اٹلی،سوئٹزرلینڈ اور فرانس نے اپنے ایئر پورٹس کھول دئے، تاہم متعدد پروازیں بدستور منسوخ رہیں۔ اٹلی میں محض چند ایک طیاروں نے ’ٹیک آف‘ کیا اور وہ بھی ملک کے اندر پروازوں کے لئے۔ ہنگری نے فوری طور پر اپنی فضائی حدود پروازوں کے لئے کھول دینے کا اعلان کیا ہے۔

اس سے پہلے فضائی کمپنیاں زبردست احتجاج کر رہی تھیں کہ اِس پابندی کے باعث اُنہیں روزانہ دو سو پچاس ملین ڈالر کے برابر نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔

Island Vulkan Natur Landschaft

آتش فشاں کی راکھ کے باعث یورپ بھر کی فضائی حدود پانچ روز تک پروازوں کے لئے بند رہیں

یورپی ہوائی اڈے بند ہونے کی وجہ سے دُنیا بھر سے یورپ آنے کے خواہاں مسافروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ بھارت نے آج بتایا کہ آتش فشاں کی راکھ سے متاثرہ یورپی فضائی حدود کے باعث بھارت میں تقریباً چالیس ہزار مسافر پھنس کر رہ گئے ہیں۔ ایوی ایشن کے محکمے کے ایک عہدیدار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پرفرانسیسی خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ کو بتایا کہ پیر کو ممبئی اور نئی دہلی میں اکتالیس ہزار چار سو پینتیس مسافر یورپ کے لئے پروازوں کی روانگی کے منتظر تھے۔ آج منگل کو اِس تعداد میں تقریباً دو ہزار پانچ سو کی کمی ہوئی ہے کیونکہ کئی مسافر دیگر راستوں سے اپنی اپنی منزلِ مقصود کی جانب روانہ ہو چکے ہیں۔ اِسی طرح ایک ہزار ایک سو بھارتی باشندے برطانیہ، کینیڈا اور جرمنی میں پھنسے ہوئے ہیں۔ توقع ہے کہ جرمنی میں پھنسے بھارتی شہریوں کو لے کر آج جرمن فضائی کمپنی لفتھانزا کا ایک طیارہ بھارت پہنچ جائے گا۔

Pakistan International Airlines

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز

بھارت کی طرح پاکستان کے مختلف ہوائی اڈوں پر بھی بہت سے پاکستانی اور غیر ملکی پھنسے ہوئے ہیں، جو یورپی فضائی حدود پر عائد پابندی ختم ہونے کے بعد اب بتدریج اپنے سفر پر روانہ ہو سکیں گے۔ پاکستانی فضائی کمپنی ’پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز‘ کو اِس قدرتی آفت کے باعث اپنی پینسٹھ پروازیں منسوخ کرنا پڑیں، جس کے باعث اُسے آٹھ ملین ڈالر کا نقصان اٹھانا پڑا ہے۔آتش فشاں کی راکھ ہی کے باعث پاکستانی وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے بھی اپنا دَورہء یورپ منسوخ کر دیا تھا۔ گیلانی کو پیرس، برسلز اور میڈرڈ کے دوروں کے دوران یورپی یونین اور پاکستان کی ایک سربراہ کانفرنس میں بھی شرکت کرنا تھی، جس کے لئے اب نئی تاریخوں کا اعلان کیا جائے گا۔

سری لنکا کی سیر پرگئے ہوئے کوئی چھ ہزار سیاح بھی یورپ میں اپنے اپنے گھروں کو واپسی کے منتظر ہیں۔ بنگلہ دیش میں بھی خدشہ ظاہر کیا گیا ہے کہ یورپی فضائی حدود کی بندش خاص طور پر ملبوسات کی برآمدات کے شعبے کو متاثر کرے گی، جو کہ ملک کے لئے زرِ مبادلہ کے حصول کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔

رپورٹ: اَمجد علی

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM