1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاک بھارت مذاکرات: کرشنا اسلام آباد میں

بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا نے کہا ہے کہ وہ امن و دوستی کا پیغام لے کر پاکستان آئے ہیں۔ اسلام آباد ایئر پورٹ پر گفتگو کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ بھارت پاکستان کے ساتھ تمام مسائل کا حل مذاکرات کے ذریعے چاہتا ہے۔

default

ایس ایم کرشنا، فائل فوٹو

ذرائع ابلاغ سے باتیں کرتے ہوئے بھارتی وزیر خارجہ نے کہا کہ وہ اپنے دورے کے دوران پاکستانی حکام سے بھارتی وزیر داخلہ کے گزشتہ ماہ دورہء پاکستان کے دوران دہشت گردی سے متعلق معاملات پر ہونے والی گفتگو، خصوصاً امریکہ میں گرفتار ڈیوڈ ہیڈلی سے ممبئی حملوں کے تناظر میں کی گئی تفتیش کے بارے میں جاننا چاہیں گے۔

ادھر پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان عبد الباسط کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کی ملاقات سے کسی بڑے بریک تھرو کی توقع نہیں رکھنی چاہئے۔ ترجمان کے مطابق مذاکرات کے دوران تمام حل طلب موضوعات پر بات ہو گی۔

تجزیہ نگاروں کے مطابق بھارتی وزیر خارجہ کے دورے سے ایک روز قبل پاکستانی وزیر داخلہ رحمٰن ملک کی جانب سے ممبئی حملوں میں گرفتار مجرم اجمل قصاب کا بیان لینے والے مجسٹریٹ کو پاکستان بھیجنے کے مطالبے اور پھر بھارتی سیکرٹری داخلہ جی کے پلائی کی جانب سے ممبئی حملوں میں پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے ملوث ہونے کے الزام سے دونوں ممالک کے درمیان کم ہوتی ہوئی کشیدگی کو ایک بار پھر ہوا مل سکتی ہے۔

Pakistans Aussenminister Shah Mahmood Qureshi

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی

پاکستان کے سابق وزیر خارجہ گوہر ایوب کا کہنا ہے کہ اجمل قصاب کو سزا ہو چکی ہے اور پاکستان سے بھی کچھ لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے۔ اب دونوں ممالک کو آگے بڑھنا چاہئے ۔اگر ہندوستان کے موقف میں لچک نہ آئی تو پھر ان مذاکرات کا کوئی مثبت نتیجہ برآمد نہیں ہو سکے گا۔

البتہ تجزیہ نگار نسیم زہرہ کا کہنا ہے کہ پاکستان اور بھارت دونوں ہی کی خواہش ہے کہ جمعرات کو ہونے والے مذاکرات نتیجہ خیز ہوں اور کشمیر، آبی وسائل اور سرکریک جیسے معاملات پر آئندہ مذاکرات کے لئے کوئی واضح ٹائم ٹیبل سامنے آئے۔

دریں اثناء اسلام آباد میں بھارتی سفارت خانے کے ترجمان کے مطابق ایس ایم کرشنا اپنے تین روزہ دورہء پاکستان کے دوران وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے علاوہ صدر آصف علی زرداری، وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی اور پاکستان کے کئی دیگر سیاسی رہنماؤں سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔

رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: امجد علی