1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان کے راستے رسد کی بحالی پر نیٹو پراُمید

نیٹو نے پاکستان کے راستے افغانستان میں تعینات اپنے فوجیوں کے لیے رسد کی بحالی کی اُمید ظاہر کی ہے۔ پاکستان نے گزشتہ ماہ اپنے فوجیوں پر حملے کے بعد سے نیٹو کا سپلائی رُوٹ بند کر رکھا ہے۔

default

نیٹو کے اعلیٰ کمانڈر جنرل جان ایلن نے منگل کو کابل میں ایک نیوز کانفرنس کے دوران سپلائی رُوٹ کھلنے کی امید کے ساتھ یہ انکشاف بھی کیا کہ پیر کو انہوں نے پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی سے فون پر بات کی تھی، جو گزشتہ ماہ پاکستانی حدود میں نیٹو کی کارروائی کے بعد ان کے درمیان ہونے والا پہلا رابطہ تھا۔

جنرل ایلن نے کہا کہ اس گفتگو میں ان دونوں نے پاکستانی چوکیوں پر ہونے والے حملے کے نتیجے میں پیدا ہونے والے تنازعے سے نمٹنے کے لیے سنجیدگی کا اظہار کیا جبکہ اپنی فورسز کے دوران تعاون کی بحالی پر بھی بات چیت کی۔

انہوں نے کہا: ’’میں پیش رفت کے عمل کو محسوس کر رہا ہوں۔ بات چیت (جنرل کیانی کے ساتھ) واضح طور پر تنازعے کے حل کی کوشش تھی۔‘‘

انہوں نے مزید کہا کہ وہ ایسے اشارے دیکھ رہے ہیں، جن کے مطابق نیٹو کا سپلائی رُوٹ کھلنا ممکن ہے۔ تاہم انہوں نے یہ بھی کہا کہ سپلائی رُوٹ کھلنے کے وقت پر کوئی بات نہیں ہوئی۔

پاکستان نے نیٹو کی جانب سے چھبیس نومبر کے حملے کے بعد اس کا سپلائی رُوٹ بند کر دیا تھا۔ فوجی چوکیوں پر ہونے والے اس حملے میں پاکستان کے چوبیس فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔

دوسری جانب پاکستان نے امریکہ کی جانب سے سات سو ملین ڈالر کی امداد منجمد کرنے کے منصوبے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ یہ رقم حاصل نہ ہونے سے کوئی بڑا مسئلہ نہیں ہوگا۔

John Allen NO FLASH

جنرل جان ایلن

پاکستانی سینیٹ کی کمیٹی برائے امورِ خارجہ کے چیئرمین سلیم سیف اللہ نے خبر رساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی جانب سے اکتیس برس کی قربانیوں کے بعد ایسا فیصلہ مایوس کن ہے۔

امریکی سینیٹروں کے ایک مذاکراتی پینل نے پیر کو پاکستان کو دی جانے والی سات سو ملین ڈالر امداد منجمد کرنے پر اتفاق کیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ جب تک پاکستان دیسی ساختہ بموں کے خلاف لڑائی میں تعاون کے لیے کسی طرح کی یقین دہانی نہیں کراتا، یہ امدادی رقم منجمد رکھی جائے گی۔ یہ اتفاق رائے دفاعی قانون کے حوالے سے سامنے آیا ہے، جو رواں ہفتے منظور کیا جا سکتا ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل / خبر رساں ادارے

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس