1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان کے جوہری ہتھیار طالبان کے ہاتھ نہ لگیں، امریکہ

امریکہ کی قومی سلامتی کے مشیر جنرل جیمز جونز نے کہا ہے کہ پاکستان اس بات کی ضمانت دے کہ اس کے جوہری ہتھیار اسلامی شدت پسندوں کے ہاتھ نہ لگیں۔

default

امریکی صدر کے قومی سلامتی کے مشیر جنرل جیمز جونز

جنرل جیمز جونز نے ایک انٹرویو میں کہا کہ پاکستان کی جانب سے متواتر یقین دہانیوں کے باوجود امریکہ اس بارے میں فکرمند ہے کہ پاکستان کے جوہری ہتھیار طالبان عسکریت پسندوں کے ہاتھ لگ سکتے ہیں۔

Obama zu Afghanistan

امریکی صدر باراک اوباما افغانستان کے مسئلے پر بدھ کے روز ایک سہ فریقی اجلاس کی میزبانی کریں گے


امریکی صدر باراک اوباما کے قومی سلامتی کے مشیر نے یہ بھی کہا کہ پاکستانی فوج نے امریکہ کو بارہا یہ یقین دہانی کرائی ہے کہ اس کے جوہری ہتھیار بالکل محفوظ ہیں اور ان کے عسکریت پسندوں کے ہاتھ لگنے کا کوئی امکان نہیں ہے تاہم امریکہ پاکستان سے اس بات کی مزید ضمانتیں چاہتا ہے۔

جنرل جیمز جونز نے مزید کہا کہ دنیا پاکستان سے یہ جاننا چاہتی ہے کہ اس کے جوہری ہتھیار کتنے محفوظ ہیں۔

Chaos und Gewalt in Pakistan Besetzte Polizeistation nahe der afghanischen Grenze Musharraf verhängt Ausnahmezustand in Pakistan

پاکستان کے جوہری ہتھیار طالبان کے ہاتھ لگنے کا امکان ایک بدترین امکان ہے، جنرل جونز

واضح رہے کہ پاکستانی افواج اور سویلین حکام نے ہمیشہ کہا ہے کہ پاکستان کے جوہری ہتھیارمکمل محفوظ ہیں۔

پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کے بارے میں جنرل جیمز جونز کے یہ بیانات اس وقت سامنے آئے ہیں جب پاکستانی فوج ملک کے شمال مغربی حصے کے مالاکنڈ ڈویژن میں طالبان عسکریت پسندوں کے خلاف برسرِ پیکار ہے۔ افغانستان سے ملحقہ اس صوبے کے بعض علاقوں میں طالبان کا عملاً کنٹرول ہے۔

سوات کا علاقہ پاکستانی دارلحکومت اسلام آباد سے محض ایک سو کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ طالبان پورے ملک میں اسلامی شریعت نافذ کرنے کا بارہا اعلان کرتے رہے ہیں۔

جنرل جیمز جونز کا یہ بھی کہنا ہے کہ پاکستان مثبت سمت میں گامزن ہے اور امریکہ اس بات کا معائنہ کررہا ہے کہ مستقبل میں صورتِ حال کیا رخ اختیار کرتی ہے۔

انہوں نے واضح طور پر کہا کہ اگر صورتِ حال درست سمت میں نہیں جاتی تو پاکستان کے جوہری ہتھیار طالبان کے ہاتھ لگنے کا سوال ضرور اٹھے گا۔

Pakistan Präsident Asif Ali Zardari

پاکستانی صدر آصف زرداری واشنگٹن پہنچ گئے ہیں۔ آئی ایس آئی کے سربراہ جنرل شجاع پاشا بھی امریکی حکّام سے ملاقاتیں کریں گے


ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کے جوہری ہتھیار طالبان کے ہاتھ لگنے کا امکان ایک بدترین امکان ہے اور اس کو روکنے کے لیے امریکہ پاکستان کے ساتھ مل کر وہ سب کچھ کرنے کے لیے تیار ہے جو وہ کرسکتا ہے۔

دریں اثناء پاکستانی صدر آصف علی زرداری واشنگٹن پہنچ گئے ہیں جہاں وہ بدھ کے روز امریکی صدر باراک اوباما کی جانب سے بلائے گے پاک افغان سہ فریقی اجلاس میں شرکت کریں گے۔

اس اجلاس کا مقصد افغانستان سے متعلق نئی امریکی پالیسی پر تبادلہ خیال بتایا جا رہا ہے۔ اجلاس میں شرکت کے لیے افغان صدر حامد کرزئی بھی امریکہ پہنچ چکے ہیں۔

دوسری جانب اعلیٰ امریکی سینیٹرز نے پاکستان کے لئے امریکی امداد کا بل سینٹ میں پیش کر دیا ہے۔ ڈیموکریٹ جان کیری اور سینیٹ کی خارجہ امور کی کمیٹی کے چیئر مین اور ری پبلکن پارٹی کے رچرڈ لوگل نے کہا کہ پاکستان میں انتہا پسندی کے خلاف جاری لڑائی میں کامیابی کے لئے اس بل کو جلد از جلد منظور کر لینا چاہئے۔

اس بل کی منظوری کی صورت میں پاکستان کو دی جانے والی امریکی امداد تین گنا ہو جائے گی۔ پاکستان کو سالانہ بنیادیوں پر ایک اعشاریہ پانچ بلین ڈالر کی امدادی رقم پانچ سالوں تک دی جائے گی۔