1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

پاکستان کےدیہی علاقوں میں توانائی کے متبادل ذرائع کی فراہمی

پاکستان میں بہت سے لوگ اپنی مدد آپ کے تحت توانائی کے متبادل ذرائع سے بجلی پیدا کر نے کی کوششیں کر رہے ہیں ۔ پاکستان میں اس حوالے سے کام کرنے والے لوگوں میں جرمنی سے آئے ہوئے ایک ماہر پروفیسر ڈاکٹر نوربرٹ پنج بھی ہیں۔

default

پروفیسر ڈاکٹر نوربرٹ پنچ

پروفیسر ڈاکٹر نوربرٹ پنچ نے سورج کی توانائی سے کام کرنے والا کھانا پکانے کا ایک آلہ تیار کیا ہے۔ یہ سولر ککر ایک بڑے پیالے کی شکل کا ہے جس میں شیشہ لگا ہوا ہے ۔ سورج کی روشنی شیشے پر پڑ کر منعکس ہوتی ہے اور شیشے کے اوپر لگے ہوئے ایک برتن کے نیچے مرتکزہو جاتی ہے۔ یہ برتن پانی کی بڑی مقدار کو سورج کی تپش سے بیس منٹ میں ابالنے کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ آفت زدہ علاقوں یا بجلی سے محروم دیہاتوں میں یہ سولر ککر بہت مفید خیال کیا جاتا ہے۔ جرمن ایمبسی اسلام آباد کے تعاون سے پروفیسر نوربرٹ پنچ نے اوکاڑہ کی ایک گراونڈ میں اس سولر ککر سے چاول، کیک اور دیگر کھانے بنانے کے کامیاب تجربے کیے ہیں۔

Deutsch-pakistanisches Entwicklungsprojekt

محمد شکیل کی تیار کردہ پتنگ

پروفیسر نوبرٹ پنچ کے مطابق توانائی کی کمی اور اس کے بہت زیادہ مہنگا ہونے کی وجہ سے اب پاکستانی لوگوں کو بدلتے حالات کے مطابق توانائی کے حصول کے متبادل طریقوں کو اختیار کرنا ہوگا۔ انہوں نے سولر اوون ، سولر پینل اور ونڈ مل بھی تیار کی ہے ۔ آج کل وہ ان اشیا کو نوجوان طالب علموں میں متعارف کرانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ اس سلسلے میں انہیں کئی نجی تعلیمی اداروں کا تعاون بھی حاصل ہے۔

یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ پنجاب کے کئی علاقوں میں جرمن اداروں کے تعاون سے شمسی توانائی سے چلنے والے بجلی کے ٹیوب ویل بھی تجرباتی طور پر لگائے گئے ہیں۔ ضلع اوکاڑہ کے ہی ایک نوجوان محمد شکیل عامر نے دو سالہ تجربات کے بعد پتنگ کے ذریعے بجلی پیدا کرنے کا عمل کامیابی سے مکمل کر لیا ہے۔

اسلام آباد میں جرمن ایمبسی کے تعاون سے محمد شکیل اب اس عمل میں فنی اعتبار سے مزید بہتریاں لانے کی تگ ودو کر رہے ہیں۔ محمد شکیل نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ انہوں نے آٹھ فٹ لمبی اور آٹھ فٹ چوڑی ایک پتنگ تیار کی ہے ۔ یہ پتنگ جب ہوا میں اڑتی ہے تو دھاگے کے ساتھ بانس پر لگے ہوئے ایک پہییے کو گھماتی ہے، جس سے بجلی پیدا ہوتی ہے۔ ان کے بقول پتنگ کے شرنک ہونے سے بھی دھاگہ لوز ہوتا ہے اور وزن نیچے گرتا ہے۔ اس طرح سے پیدا ہونے والا کرنٹ بیٹریوں میں اسٹور کر لیا جاتا ہے۔

Deutsch-pakistanisches Entwicklungsprojekt

محمد شکیل کے بقول اس پتنگ سے پیدا ہونے والی بجلی ایک انرجی سیور اور ایک پنکھا چلانے کے لیے کافی ہے

ان کے بقول اس پتنگ سے پیدا ہونے والی بجلی ایک انرجی سیور اور ایک پنکھا چلانے کے لیے کافی ہے۔ محمد شکیل پچھلے ہفتے لاہور کے ایک نواحی علاقے میں پتنگ سے بجلی پیدا کر کے ڈیزرٹ کولر چلانے کا عملی مظاہرہ کر چکے ہیں۔ وہ اپنی اس ایجاد کو مزید بہتر بنا کر عوامی سطح پر عام کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ یاد رہے اس سے پہلے پاکستان میں شمسی توانائی کے ذریعے چلنے والا بجلی کا گیزر بھی تیار کیا جا چکا ہے۔ اچھی بات یہ ہے کہ ان تمام آلات کی تیاری کے لیے مقامی مارکیٹ میں موجود سستا میٹیریل استعمال کیا گیا ہے۔

ڈوئچے ویلے سےگفتگو کرتے ہوئے ایک ماہر غیور عبید نے بتایا کہ ترقی پذیر ملکوں کو آنے والے دنوں میں توانائی کے متبادل ذرائع کی طرف توجہ دینا ہوگی کیونکہ اب اس کے بغیر گزارا نہیں ہوگا۔ ان کے بقول مہنگائی کے اس زمانے میں توانائی کے مہنگے آلات باہر سے در آمد کرنا ہر کسی کے بس کی بات نہیں ہے۔

رپورٹ : تنویر شہزاد، لاہور

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس

Audios and videos on the topic