1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان کی مدد کے لئے دو ارب ڈالر کی عالمی اپیل

اقوام متحدہ نے پاکستان میں متاثرینِ سیلاب کے لئے دو ارب ڈالر کی ہنگامی امداد کی اپیل کی ہے۔ سیکریٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ اس عالمی ادارے نے اپنی 65 سالہ تاریخ میں اس سے بدتر قدرتی آفت کا سامنا نہیں کیا۔

default

متاثرین کے لئے امداد کی نئی میگا اپیل کے اجراء کے موقع پر اقوام متحدہ کی نائب سیکریٹری جنرل برائے انسانی امور اور ایمرجنسی ریلیف کوآرڈینیٹر Valerie Amos نے کہا، ’ہم ایک طرف کھڑے ہو کر اس قدر بڑے پیمانے پر ہونے والی تباہی کا تماشا نہیں دیکھ سکتے۔‘

Valerie Amos 2002

اقوام متحدہ کی نائب سیکریٹری جنرل برائے انسانی امور

گزشہ ماہ اقوام متحدہ نے پاکستان کی مدد کے لئے 46 کروڑ ڈالر کی اپیل کی تھی۔ حکام کا کہنا ہے کہ اس رقم کا 80 فیصد دستیاب ہو چکا ہے۔ نئی اپیل میں یہ رقم بھی شامل کر لی گئی ہے جبکہ نئی اپیل کے لئے رقم فراہم کرنے والے اوّلین ممالک میں بھارت بھی شامل ہے، جس نے ڈھائی کروڑ ڈالر فراہم کر دیے ہیں۔

یہ رقم آئندہ ایک سال کے دوران ایک کروڑ 40 لاکھ متاثرین کی مدد کے لئے استعمال کی جائے گی۔ اقوام متحدہ کے مطابق خوراک خریدنے، ایمرجنسی کیمپ لگانے اور زرعی زمینوں اور دیہات کی بحالی کے لئے رقم درکار ہے۔

اس سے پہلے اقوام متحدہ نے ہنگامی مدد کے لئے اس قدر بڑی رقم کی اپیل رواں برس جنوری میں ہیٹی کے زلزلے کے حوالے سے کی تھی، جس کا حجم ڈیڑھ ارب ڈالر تھا۔ رواں برس مجموعی طور پر اقوام متحدہ نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر 11 ارب کی اپیل کی ہے۔

دوسری جانب فلاحی تنظیموں نے خبردار کیا ہے کہ سیلاب زدگان میں امراض کے

Epidemie und Erkrankungen im Flutgebiet Pakistans

سیلاب زدگان میں جِلدی بیماریوں کے دس لاکھ کیس سامنے آئے ہیں

پھیلاؤ کا عمل شدت اختیار کر سکتا ہے۔ پہلے ہی سات لاکھ سے زائد افراد کے دستوں کی بیماری کا شکار ہونے کی اطلاع ہے۔ جِلدی بیماریوں کے دس لاکھ اور سانس کے انفیکشن کے آٹھ لاکھ کیسز سامنے آ چکے ہیں۔

پاکستان کے مختلف علاقوں میں جولائی کےمہینے میں طوفانی بارشیں سیلاب کی وجہ بنیں۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق اس دوران ہلاکتوں کی تعداد دو ہزار سے کم رہی ہے۔ تاہم اقوام متحدہ کے مطابق دو کروڑ سے زائد افراد کو بے گھر ہونے کے ساتھ ساتھ خوراک میں کمی اور بیماریوں میں مبتلا ہونے کے خطرے کا سامنا ہے۔

اقوام متحدہ زیادہ سے زیادہ عالمی توجہ اس سیلاب کے اثرات کی جانب مبذول کرانے کے لئے کوشاں ہے۔ اس قدرتی آفت کو ہیٹی کے زلزلے اور ایشیا کے سونامی کے برابر قرار دیا جا رہا ہے حالانکہ اس دوران ہلاکتوں کی تعداد کہیں کم رہی ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: امجد علی