1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان نے ڈرون کا مسئلہ عالمی فورم پر اٹھا دیا

اقوام متحدہ کی ہیومن رائٹس کونسل میں پاکستان کی نمائندہ تہمینہ جنجوعہ نے ڈرون حملوں کا مسئلہ اٹھا دیا ہے اور اسے پاکستان کی خودمختاری اور عالمی قوانین اور یواین چارٹر کے خلاف قرار دیا ہے۔



تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے ان حملوں کے خلاف کام کرنے والی تنظیمیں حکومت سے کچھ زیادہ تواقعات وابستہ نہیں کر رہی ہیں۔ پاکستان میں ڈرون حملوں میں مارے جانے والے شہریوں کے لیے قانونی جنگ لڑنے والے وکیل شہزاد اکبر نے کہا، ’’ایک غیرملکی دہشت گرد کے ہلاک ہونے پر، جس کی سر کی قیمت بھی لگی ہوئی تھی، حکومت اقوامِ متحدہ کے فورم پر پہنچ گئی ہے اور جو تین سو کے قریب پاکستانی ان حملوں میں ہلاک ہوئے ہیں، حاکموں کو اُن کی کوئی فکر نہیں۔ جب آپ ایک دہشت گرد کے مرنے پر ایسے اداروں میں جائیں گے تو آپ کے موقف کی کون اخلاقی و قانونی طور پر حمایت کرے گا۔ اپنے شہریوں کے حوالے سے تو آپ ٹال مٹول سے کام لے رہے ہیں۔ ہم نے سی آئی اے کے خلاف مقدمہ درج کرایا، تو حکومت نے اس کی بھر پور مخالفت کی اور بعد میں اِس مقدمے کو فاٹا منتقل کردیا، جہاں پاکستان کے قوانین کا اس طرح اطلاق نہیں ہوتا جیسا کہ ملک کے دوسرے علاقوں پر ان قوانین کا اطلاق ہوتا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں شہزاد اکبر نے کہا، ’’ اگر حکومت اِس حوالے سے کوئی موثر کام کرنا چاہتی ہے تو اِس کو اقوامِ متحدہ کی سکیورٹی کونسل میں اٹھائے۔

Pakistan Proteste gegen US Drohnenangriffe

پاکستان میں امریکی ڈرون حملوں کے خلاف بہت سخت احتجاج کیا جاتا رہا ہے

ہیومن رائٹس کونسل میں تو یہ مسئلہ پہلے بھی اٹھا یا گیا تھا اور اس پر روس اور چین کے نمائندوں کے علاوہ اور بھی کئی لوگوں نے بات کی تھی۔ اس کا کوئی زیادہ فائدہ نہیں ہے کیونکہ یہ فورم شہریوں اور عام افراد کے لیے ہے۔ ریاستوں کے لیے بہترین فورم سکیورٹی کونسل ہے، جہاں پاکستان اپنی خودمختاری کی خلاف ورزی کے مسئلے کو اٹھا سکتا ہے۔ میرے خیال میں حکومت اس معاملے میں مخلص نہیں ہے اور صرف سیاسی مقاصد کے لیے اس مسئلے کو اٹھایا گیا ہے۔ ہم تین سو کے قریب ڈرون کے شکار ہونے والے افراد کے گھرانوں کامقدمہ لڑ رہے ہیں۔ ہم سے نہ حکومت نے کوئی رابطہ کیا اور نہ ہمیں حاکموں سے کوئی امید ہے۔ حکومت کا وکیل تو آج بھی یہی کہتا ہے کہ وہ ہماری مخالفت کرے گا۔‘‘ دفاعی تجزیہ نگاربریگیڈیئر ریٹائرڈ شوکت قادر شہزاد اکبر کی بات سے متتفق نہیں۔ ان کے خیال میں پاکستان سنجیدگی سے اس مسلئے کو اٹھانا چاہتا ہے۔ ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا،’’لوگ یہ بھول جاتے ہیں کہ پہلا ڈرون حملہ دوہزار چار میں ہوا جب مشرف نے امریکا سے نیک محمد کو ٹارگیٹ کرنے کو کہا تھا۔ بعد میں امریکی شیر ہوگئے ۔ ڈرون کے حوالے سے ہمارا نکتہ نظر تبدیل ہوتا جا رہا ہے۔

Protest Pakistan Drone NATO

اپوزیشن حکومت کو زیر دباؤ لانے کے لیے بھی اس مسئلے کو بھرپور طریقے سے استعمال کر رہی ہے

جب ڈرون نے صرف ایسے دہشت گردوں کو ہدف بنایا جو ہمارے بھی دشمن تھے اور جس سے عام شہری ہلاک نہیں ہوئے تو ہم اِس پر خاموش رہے لیکن جب اس سے شہریوں کی ہلاکتیں زیادہ ہوئیں تو ہم نے اس پر احتجاج کیا۔ اس وقت مسئلہ یہ ہے کہ پہلے امریکا نے ہم سے کہا کہ طالبان سے بات کرو۔ جب ہم نے انہیں راضی کرلیا اور ہوسکتا ہے کہ ملا اختر منصور مذاکرات کے لیے ہی یہاں آرہا ہو، تو امریکا نے اس پر حملہ کر دیا اور ہمیں یہ بتایا کہ اُسے ایران یا افغانستان میں نہیں مارا گیا بلکہ پاکستان میں مارا گیا۔ اب کون طالبان پاکستان پر بھروسہ کرے گا تو امریکا نے بات چیت کو سبوتاژ کیا۔‘‘
ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا،’’اگر دوبارہ حملہ ہوا تو پاکستان کیا کرسکتا ہے سوائے اس کے کہ بین الاقوامی اداروں میں شور شرابہ کرے۔ امریکا عالمی طاقت ہے۔ آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک اس کے حلقہ اثر میں ہے تو ہم اس کا کیا کر سکتے ہیں۔ جب جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی جاسوسی کے حوالے سے معاملہ سامنا آیا تو کیا اس نے کچھ کیا۔ اس نے کچھ نہیں کیا۔ ہم کوئی دلہن کی طرح امریکا سے روٹھ کے تو نہیں بیٹھ سکتے۔‘‘
جماعت اسلامی کے سابق امیر منور حسن نے ڈی ڈبلیو سے بات کرتے ہوئے کہا،’’اب اگر پاکستان نے اس مسئلے کو اٹھایا ہے تو اس کی گونج سارے بین الاقوامی اداروں میں سنی جانی چاہیے اور حکومت قوم کو اِس مسئلے پر اعتماد میں لے۔ مستقبل کے لیے امریکا کو وارننگ دے اور اگر پھر بھی ڈرون حملہ ہوتا ہے تو پاکستان اس کو گرادے۔ امریکا اور ساٹھ ممالک کی آرمی افغانستان میں کچھ نہیں حاصل کر سکے تو ہمارا کیا بگاڑ لیں گے۔

DW.COM