1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان میں وکلاء اور سیاسی کارکنوں کی گرفتاریاں

پاکستان میں وکلا کی جانب سے لانگ مارچ کی کال اور نواز لیگ اور دیگر اپوزیشن جماعتوں کی لانگ مارچ میں شمولیت کے اعلان کے بعد پولیس بڑی تعداد میں سیاسی کارکنوں کی گرفتاریوں کے لئے چھاپے مار رہی ہے۔

default

پاکستانی حکام نے معزول چیف جسٹس جسٹس افتخار محمد چوہدری کے حامی وکلاء کے مجوزہ لانگ مارچ اور اپوزیشن سیاسی جماعتوں کی احتجاجی ریلیوں کو روکنے کے لئے مختلف شہروں میں چھاپے مار کر سینکڑوں افراد کو حراست میں لے لیا ہے۔

گرفتاریوں کے حوالے سے پنجاب صوبے کے سیکرٹری داخلہ راوٴ افتخار نے بتایا: ’’ہم نے ابھی تک تین سو سے زائد افراد کو گرفتار کیا ہے۔ ہم صوبائی اسمبلی کے کسی بھی رکن کے گھر میں نہیں گئے، ہم نے صرف شر پسند عناصر کو ہی پکڑا ہے۔‘‘

مشیر داخلہ رحمان ملک نے کہا کہ صوبائی حکومت امن و امان کی صورت حال یقینی بنانے کے لئے پوری طرح سے تیار ہے اور قانون توڑنے کے کسی بھی ممکنہ خطرے سے نمٹنے کے لئے اس کے پاس وسیع اختیارات ہیں۔

صوبہ سندھ اور پنجاب کی حکومتوں نے احتجاجی ریلیوں اور مظاہروں پر مکمل پابندی عائد کردی ہے۔ وکلاء اور حقوق انسانی کی تنظیموں نے پولیس کریک ڈاوٴن کی مزمت کی ہے۔

وکلاء کے لانگ مارچ کی کال میں نواز لیگ کی شمولیت کے اعلان کے بعد تیزی دیکھنے میں آئی ہے۔

DW.COM