1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان میں شدید بارشیں، تیس سے زائد افراد ہلاک

پاکستان میں گزشتہ چند روز کے دوران ہونے والی شدید بارشوں کے نتیجے میں اب تک کم از کم اکتیس افراد ہلاک اور پچاس کے قریب زخمی ہو گئے ہیں۔ یہ اعداد و شمار قدرتی آفات کے اثرات کا مقابلہ کرنے والے پاکستانی ادارے نے جاری کیے۔

پاکستانی دارالحکومت اسلام آباد سے اتوار تیرہ مارچ کو ملنے والی نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ ان بہت شدید بارشوں کا آغاز جمعرات دس مارچ کو ملک کے جنوب مغربی صوبے بلوچستان سے ہوا تھا اور اس کے بعد اختتام ہفتہ تک یہ سلسلہ ملک کے باقی صوبوں تک پھیل چکا تھا۔

نیشنل ڈیزاسٹر مینیجمنٹ اتھارٹی (NDMA) کے اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ ان بارشوں کے بعد کئی نشیبی علاقے زیر آب آ جانے یا بارشوں ہی کی وجہ سے پیش آنے والے دیگر حادثات اور واقعات کے باعث اتوار کی سہ پہر تک پورے ملک میں کم از کم 31 افراد ہلاک اور 47 زخمی ہو چکے تھے۔ این ڈی ایم اے کے مطابق اس دوران ملک کے مختلف حصوں میں 53 مکانات بھی یا تو منہدم ہو گئے یا انہیں بری طرح نقصان پہنچا۔

حکام نے بتایا کہ شدید بارشوں کے نتیجے میں جن کم از کم 31 افراد کی جان گئی، ان میں سے 17 بلوچستان میں ہلاک ہوئے جبکہ 13 شمال مغربی پاکستان کے قبائلی علاقوں میں اور ایک شہری کی موت صوبہ خیبر پختونخوا میں ہوئی۔ مرنے والوں میں مجموعی طور پر چار خواتین اور چھ بچے بھی شامل ہیں۔

این ڈی ایم اے کے ترجمان احمد کمال نے جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے کو بتایا کہ ان تقریباﹰ سبھی ہلاک شدگان کی موت جمعرات کے روز اس وقت ہوئی جب ملک میں گزشتہ جمعرات کے روز شدید بارشوں کے موجودہ سلسلے کا آغاز ہوا تھا۔ احمد کمال نے کہا کہ پاکستانی قبائلی علاقوں میں ہلاک ہونے والے 13 افراد میں سے کم از کم پانچ اورکزئی ایجنسی نامی علاقے میں اس وقت مارے گئے جب کوئلے کی ایک کان بیٹھ گئی۔

Pakistan Unwetter Überschwemmung

شدید بارشوں کے بعد کئی مقامات پر نشیبی علاقے جزوی طور پر زیر آب آ گئے

یہ ہلاک شدگان اسی کان میں کام کرنے والے کان کن تھے۔ اس واقعے کے بعد فوری امدادی کارروائیاں کر کے 26 کان کنوں کو وہاں سے نکال لیا گیا جبکہ مبینہ طور پر دو کارکن ابھی تک اس کان میں پھنسے ہوئے ہیں۔

پاکستانی محکمہ موسمیات کے مطابق ملک کے مختلف علاقوں میں اگلے چوبیس گھنٹوں کے دوران مزید بھاری بارشیں متوقع ہیں، جو ممکنہ طور پر علاقائی سطح پر اچانک آنے والے سیلابوں کی وجہ بن سکتی ہیں۔

گزشتہ سال بھی گرمیوں میں پاکستان میں مون سون کے موسم کے دوران شدید بارشیں ہوئی تھیں، جن کی وجہ سے پورے ملک میں 81 افراد ہلاک اور کل قریب تین لاکھ شہری متاثر ہوئے تھے۔

DW.COM