1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پاکستان میں سرکاری اسکولوں کی کمی، متبادل نظام کیا ہے؟

پاکستان میں بچوں کی تعلیمی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے اب دینی مدرسے، نجی اسکول اور فلاحی تنظیموں کے زیر انتظام تعلیمی ادارے، ملک میں سرکاری اسکولوں کی کمی کو دور کرنے کا ذریعہ بنتے جا رہے ہیں۔

Pakistan Bildungslücken im Land (Reuters/C. Firouz)

ملک میں غرباء اپنے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے کے لیے عام طور پر دینی مدارس میں بھیجتے ہیں

پاکستان کے دارالحکومت سے تیس کلومیٹر دور مری کے ہِل اسٹیشن پر واقع الندوہ مدرسہ اس جنوبی ایشیائی ملک میں حصول تعلیم کے متبادل نظام کا ایک حصہ ہے۔ پاکستان میں قریب پچاس ملین بچے اسکول جانے کی عمر میں ہیں لیکن ان بچوں کے لیے تعلیم کی سہولت کے دستیاب وسائل بہت کم ہیں۔

پاکستانی حکومت کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ملک بھر میں دو لاکھ بیس ہزار اسکول ہونے کے باوجود اب بھی بیس ملین کے قریب بچے تعلیم حاصل کرنے سے محروم ہیں۔ ملک میں تعلیم کے فروغ کے لیے کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیم الف اعلان کا کہنا ہےکہ سن 2010 سے اب تک ہر سال حکومت نے تعلیم کے بجٹ میں پندرہ فیصد اضافہ کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے تخمینے کے مطابق پاکستان میں تعلیم کے لیے مختص موجودہ بجٹ تقریباﹰ آٹھ بلین ڈالر ہے جو جی ڈی پی کا 2.65 فیصد اور فی طالب علم ڈیڑھ سو ڈالر بنتا ہے۔

Pakistan Bildungslücken im Land (Reuters/C. Firouz)

ملک میں دو لاکھ اسکول ہونے کے باوجود اب بھی بیس ملین بچے تعلیم سے محروم ہیں

پاکستان میں ’مشال اسکول سسٹم‘ کی بانی زیبا حسین کا کہنا ہے کہ مسئلہ اسکولوں کی تعداد کا نہیں بلکہ تعلیمی معیار کا ہے۔ زیبا حسین کو  فلاحی اسکولوں کے سلسلے ’مشال‘ کے آغاز کا خیال اسلام آباد کے نواحی پہاڑی علاقے کا دورہ کرتے ہوئے مہاجر بچوں کے ایک گروپ سے ملاقات کے بعد آیا تھا۔

وفاقی تعلیمی ڈائریکٹر طارق مسعود کا کہنا ہے کہ تعلیمی معیار کے حوالے سے اساتذہ کو الزام دینا ٹھیک نہیں۔ خبر رساں ادارے روئٹرز سے بات کرتے ہوئے مسعود نے کہا کہ آبادی میں اضافہ اور فنڈز کی کمی سرکاری اسکولوں کو درپیش سب سے بڑے چیلنجز ہیں۔

ملک میں غرباء اپنے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے کے لیے عام طور پر دینی مدارس میں بھیجتے ہیں۔ ان مدارس کا کہنا ہے کہ وہاں بچوں کو تین وقت کا کاکھانا ، رہنے کے لیے جگہ اور اچھی تعلیم دی جاتی ہے۔

الندوی مدرسہ کے عرفان شیر کے مطابق بعض والدین اپنے بچوں کو محض اس لیے مدرسے میں بھیجتے ہیں کیونکہ وہ انہیں کھانا کھلانے کی بھی استطاعت نہیں رکھتے۔

DW.COM