1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان میں دہشت گردی کی لہر، حکومت تذبذب کا شکار

دہشت گردی کی تازہ لہر کے تناظر میں جہاں پاکستان کی معیشت اور سیکیورٹی مفادات کے حوالے سے خدشات جنم لے رہے ہیں وہاں اس معاملے میں بھارت سمیت غیر ملکی قوتوں کے ملوث ہونے کے حوالے سے بھی ایک نئی بحث چھڑی ہوئی ہے۔

default

رحمان ملک ان واقعات کی ذمہ داری بھارت پر ڈالتے ہیں

اس بحث کی بنیادی وجہ جنرل ہیڈ کوارٹرز، مناواں پولیس اکیڈمی، سری لنکن کرکٹ ٹیم اور راولپنڈی میں پریڈ لین کی مسجد پر ہونے والےکمانڈو حملے ہیں۔ یہ حملےبھارت کے زیرانتظام کشمیر میں سرگرمِ عمل کالعدم لشکر طیبہ نامی تنظیم کی کارروائیوں سے خاصی مماثلت رکھتے ہیں۔

اس کے علاوہ وزیر داخلہ رحمنٰ ملک نے بدھ کے روز ایک بار پھر اس امر کا اعادہ کیا کہ دہشت گردی کے واقعات میں ’’بھارتی کردار‘‘ کےکئی ثبوت ملے ہیں، جو وزارت خارجہ کے حوالے کئے جا چکے ہیں : ’’یہ بات ریکارڈ پر موجود ہے کہ چار ٹرک بھارتی ساخت کے اسلحے سے بھرے ہوئے تھے ملے، اس کے علاوہ باڑہ میں بھی بھارتی ساخت کا اسلحہ وافر مقدار میں برآمد کیا گیا۔ اب یہ وزارت خارجہ کا کام ہے اور اب اس کو یہ بات واضح کرنا چاہئے کہ وہ اس معاملے کو کس طرح آگے بڑھاتی ہے۔‘‘

Pakistans Außenminister Shah Mehmood Qureshi auf PK zum Tod des Talibanführers Mehsud

پاکستانی وزیر خارجہ واضح ثبوتوں کے بغیر الزامات کو جذباتی قرار دیتے ہیں

دوسری طرف وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ محض جذباتی الزامات سے بھارتی مداخلت کو ثابت نہیں کیا جا سکتا اور اس کےلئے غیر معمولی احتیاط اور سوچ بچار درکار ہے: ’’ ہم جذباتی باتیں کر سکتے ہیں لیکن ان جذباتی باتوں کو جب منطقی نتیجے پر پہنچاتے ہیں اور قانون کے کٹہرے میں ان پر سوال اٹھتے ہیں تو اس بارے میں پہلے سے سوچ بچار ضروری ہے۔‘‘

دونوں وفاقی وزراء کے بیانات سے یہ تاثر جنم لے رہا ہے کہ حکومت دہشت گردی کی کارروائیوں کی تفتیش اور اس معاملے کو بین الاقوامی سطح پر اٹھانے کے حوالے سے تذبذب کا شکار ہے۔ دو اہم ترین وزارتوں کے مابین اس انتہائی اہم مسئلے پر رابطوں اور صلاح مشورے کا بھی فقدان معلوم ہوتا ہے، جس کے باعث پاکستانیوں کی اکثریت اس مخمصے کا شکار ہے کہ نومبر0082ء میں ممبئی حملوں کے بعد کی علاقائی سیکیورٹی صورتحال میں پڑوسی ملک بھارت کا کیا کوئی کردار ہے؟ اور اگر ہے تو حکومت یک زبان ہوکر اس معاملے کو بھارت کے ساتھ اور بین الاقوامی سطح پر اٹھانے سے کیوں قاصر یا گریزاں ہے۔

رپورٹ : امتیاز گل، اسلام آباد

ادارت : عاطف بلوچ