1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

پاکستان میں توانائی بچانے کا جرمن منصوبہ

توانائی کے بحران سے دوچار پاکستان میں آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن (اپٹما) نے جرمنی کے ممتاز ترقیاتی ادارے جی آئی زیڈ کے تعاون سے توانائی کے ضیاع کو روکنے کا ایک ماحول دوست منصوبہ شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

default

آل پاکستان ٹٰیکسٹائل ملز اونرز ایسوسی ایشن کا ہیڈکوارٹر

اس منصوبے کے تحت پاکستان میں دھاگہ بنانے والے چار سو کارخانوں میں انرجی مینیجمنٹ سسٹم رائج کرکے 268 میگا واٹ بجلی بچائی جائے گی۔ اس طرح نہ صرف آٹھ ارب روپے کی بچت ہو گی بلکہ ماحولیاتی آلودگی کا باعث بننے والی کثافتوں کے علاوہ ایک ملین ٹن سے زیادہ کاربن ڈائی آکسایئڈ کا اخراج  بھی روکا جا سکے گا۔

اس منصوبے کے ذریعے پاکستانی ٹیکسٹائل ملوں میں توانائی کی بچت کے خصوصی سیل بنائے جائیں گے، عملے کو خصوصی تربیت دی جائے گی اور بجلی کی ترسیل کو باقاعدہ طور پر مانیٹر کرتے ہوئے اس کا مؤثر استعمال یقینی بنایا جائے گا۔ یہ منصوبہ پاکستانی ٹیکسٹائل ملوں میں مرحلہ وار شروع کیا جا رہا ہے اور اس سلسلے میں مستفید ہونے والی  ہر مل کو معمولی رقم ادا کرنا ہوگی۔

سیکرٹری اپٹما انیس احمد کے مطابق اس سے پہلے جرمن ماہرین کی مدد سے 25 ٹیکسٹائل ملوں میں پہلے ہی یہ تجربہ کامیابی سے مکمل کیا جا چکا ہے۔ یاد رہے کہ اس ضمن میں جرمن ماہرین کسی معاوضے کے بغیر پچیس ملوں میں ساڑھے سات میگا واٹ بجلی بچا کر 293 ملین روپے کی بچت کرنے کا عملی مظاہرہ کر چکے ہیں۔

Pakistan Lahore GTZ Energie Umwelt

جرمن ماہرین کچھ عرصے سے پاکستان کی ٹٰیکسٹائل ملوں میں توانائی کی بچت کا تصور متعارف کرا رہے ہیں

پاکستان میں ٹیکسٹائل سیکٹر سب سے زیادہ بجلی استعمال کرنے والا سیکٹر ہے جو کہ پندرہ سو میگا واٹ بجلی استعمال کرتا ہے۔ اپٹما کی چار سو ملوں میں سے 80 فیصد اپنی بجلی خود تیار کرتی ہیں جبکہ 20 فیصد واپڈا کی بجلی استعمال کرتی ہیں۔ ملک کے لیے سب سے زیادہ زر مبادلہ کمانے والے اس سیکٹر کو بجلی کے کم اور مہنگا ہونے کی وجہ سے کافی مشکلات کا سامنا رہتا ہے۔

انیس احمد کا کہنا تھا کہ پاکستانی ٹیکسٹائل ملیں انرجی مینیجمنٹ سسٹم کو اپنا کر انرجی مینیجمنٹ کے عالمی میعار کے وہ سرٹیفکیٹ بھی حاصل کر سکیں گی جو کہ آنے والے دنوں میں ٹیکسٹائل ایکسپورٹروں کے لیے ضروری ہوں گے۔

 اپٹما نے جرمن ماہرین کی مدد سے توانائی کے امور میں فنی معاونت فراہم کرنے کے لیے"سسٹین ایبل پروڈکشن سنٹر" بھی بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔

Seide aus Japan

پاکستان میں ٹیکسٹائل سیکٹر سب سے زیادہ بجلی استعمال کرنے والا سیکٹر ہے

 اس موقع پر ڈوئچے ویلے سے گفتگو کرتے ہوئے جی آئی زیڈ کے پرنسپل ایڈوائزر برائے متبادل توانائی بَیرن ہارڈ مائے ہَوئفَر نے بتایا کہ ہم پاکستانی صنعت کو درپیش توانائی کے بحران کو حل کرنے کے لیے مدد فراہم کر رہے ہیں۔ ان کے بقول دھاگہ بنانے والا ایک عام کارخانہ انرجی مینجمنٹ کے جدید طریقے اپنا کر بیس سے پچیس فی صد بجلی بچا سکتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اب وہ ٹیکسٹائل کے علاوہ دوسری صنعتوں کو بھی یہ خدمات فراہم کریں گے۔ ان کے مطابق جی آئی زیڈ توانائی بچانے کے علاوہ توانائی کے متبادل ذرائع سے بجلی کے حصول کے لیے بھی رہنمائی فراہم کر رہا ہے۔

 ثمین ٹیکسٹائل ملز کے عبدالجبار نے بتایا کہ انہیں خوشی ہے کہ جرمن ماہرین کی مدد سے ان کے کارخانے کا بجلی کا بل کافی کم ہو گیا ہے اور وہ مختصر عرصے میں ایک میگا واٹ بجلی بچانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ ان کے بقول جرمن ماہرین اس حوالے سے ہمارے  لوگوں کا مائنڈ سیٹ بدلنے میں کامیاب رہے ہیں۔ انہوں نے کہا بجلی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کی وجہ سے کاروباری دنیا کو توانائی کی بچت کے منصوبوں کی طرف ہی آنا ہو گا۔

اپٹما میں قائم انرجی کنزرویشن سیل سے وابستہ خاور رشید نے بتایا کہ بہت معمولی لاگت سے بجلی بچانے کا جرمن منصوبہ ایک نیا تصور ہے لیکن پھر بھی یہ پاکستان کے کاروباری حلقوں میں  تیزی سے مقبول ہو رہا ہے۔

رپورٹ: تنویر شہزاد، لاہور

ادارت: حماد کیانی

DW.COM