1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان میں افغان مہاجرین کا قیام، توسیعی معاہدے پر دستخط

پاکستان میں مقیم لاکھوں رجسٹرڈ افغان مہاجرین سے متعلق اسلام آباد میں منگل اور بدھ کو ایک سہ فریقی کمیشن کا دو روزہ اجلاس ہوا، جس میں ان مہاجرین کے پاکستان میں قیام کے بارے میں تفصیلی گفتگو کی گئی۔

Pakistan Afghanistan Flüchtlinge (DW/I. Jabeen)

مہاجرین سے متعلقہ امور کے افغان وزیر سید حسین عالمی بلخی، دائیں، پاکستانی وزیر عبدالقادر بلوچ کے ہمراہ

اس کمیشن کے اجلاس میں پاکستانی اور افغان حکومتوں کے اعلیٰ نمائندوں کے علاوہ اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین یو این ایچ سی آر کے پاکستان میں سربراہ نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں پاکستان میں مقیم لاکھوں رجسٹرڈ اور غیر رجسٹرڈ افغان مہاجرین کے قیام اور ان کے لیے طویل المدتی ویزوں کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔

یہ اجلاس اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے، جس کے تحت گزشتہ برس نومبر میں پاکستان کی وفاقی کابینہ نے افغان مہاجرین کے پاکستان میں قیام کی مدت میں محدود توسیع کی منظوری دے دی تھی۔

اسلام آباد کے ایک ہوٹل میں ہونے والے تازہ اجلاس میں تینوں فریقوں نے افغان مہاجرین کے پاکستان میں قیام کی مدت میں توسیع پر اتفاق کرتے ہوئے ایک ایسے معاہدے پر دستخط کر دیے، جس کے تحت اب یہ مہاجرین اس سال دسمبر کے آخر تک پاکستان میں قیام کر سکتے ہیں۔

اس اجلاس میں افغانستان کی نمائندگی کابل حکومت کے مہاجرین سے متعلقہ امور کے وزیر سید حسین عالمی بلخی اور پاکستان میں افغان سفیر عمر زاخیل وال نے کی جبکہ پاکستان کی نمائندگی وفاقی وزیر عبدالقادر بلوچ اور یو این ایچ سی آر کے نمائندگی پاکستان میں اس ادارے کے سربراہ اندریکا رتواٹے نے کی۔

اجلاس میں شریک مہاجرین کے امور کے افغان وزیر سید حسین عالمی بلخی نے ڈی ڈبلیو کے ساتھ گفتگو میں پاکستانی حکومت کے اس اقدام کو سراہتے اور کابل حکومت کی کوششوں کی وضاحت کرتے ہوئے کہا، ’’پاکستان سے جو افغان مہاجرین واپس جا رہے ہیں، افغان حکومت ان میں سے ہر خاندان کو زمین دے رہی ہے اور حکومت نے اس مد میں مہاجرین کے لیے ملک میں ستائیس جگہیں بھی مختص کی ہیں۔ وہاں ہر اس افغان مہاجرخاندان کو جو پاکستان سے واپس آتا ہے، ایک ایک پلاٹ دیا جا رہا ہے۔‘‘

Pakistan Afghanistan Flüchtlinge (DW/I. Jabeen)

تیسرے فریق کے طور پر معاہدے پر دستخط کرنے والے پاکستان میں اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کے سربراہ اندریکا رتواٹے

جب ڈی ڈبلیو نے ان سے یہ پوچھا کہ آیا افغان حکومت ایسے مہاجرین کو وطن واپسی پر نئے گھر بنانے کے لیے مالی مدد بھی فراہم کرے گی، تو انہوں نے کہا کہ کابل حکومت تو نہیں البتہ اس حوالے سے بین الاقوامی غیر سرکاری امدادی ادارے ایسے افغان شہریوں کی مدد کر رہے ہیں۔‘‘

پاکستان میں موجود افغان مہاجرین کے مسائل میں سے دوسرا سب سے بڑا مسئلہ طویل المدتی ویزوں کا حصول ہے۔ کچھ رجسٹرڈ مہاجرین اگر مختلف تعلیمی اداروں سے منسلک ہیں تو کچھ کے کاروبار بھی پاکستان میں ہیں جبکہ بہت سے افغان مہاجرین نے پاکستان میں شادیاں بھی کر رکھی ہیں۔ ان حالات میں ایسے تمام افغان شہریوں کی ان کے وطن واپسی بظاہر ایک مشکل بات ہے۔

اس مسئلے کے ممکنہ حل پر روشنی ڈالتے ہوئے پاکستان میں ’سیفران‘ کے وزیر عبدالقادر بلوچ نے ڈی ڈبلیو سے بات چیت کرتے ہوئے کہا، ’’رجسڑڈ افغان مہاجرین کو لانگ ٹرم ویزا دینے کی مد میں بھی کام جاری ہے۔ مثال کے طور پر اگر کسی افغان طالب علم کو کسی میڈیکل کالج میں پڑھتے ہوئے ابھی کچھ ہی عرصہ ہوا ہو، تو اس کو اپنی تعلیم پوری کرنے کے لیے مزید ویزا دیا جائے گا تاکہ وہ سکون سے اپنی تعلیم پاکستان میں جاری رکھ سکے اور کوئی اس کو تنگ نہ کرسکے۔‘‘

عبدالقادر بلوچ نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ''ایسے افغان مرد جنہوں نے پاکستانی خواتین سے شادیاں کر رکھی ہیں، ان کو بھی طویل المدتی ویزے دیے جائیں گے۔ اس کے علاوہ ایسے رجسٹرڈ افغان مہاجرین جن کے کاروبار پاکستان میں ہیں، ان کو بھی مکمل جانچ پڑتال کے بعد لانگ ٹرم ویزے جاری کر دیے جائیں گے۔ لیکن ایسے ویزوں کی تعداد لاکھوں میں نہیں بلکہ ہزاروں میں ہو گی۔‘‘ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے نہ تو پہلے کبھی اپنے ہاں سے ان رجسڑڈ افغان مہاجرین کو نکالا ہے اور نہ ہی اب ایسا کیا جائے گا۔

اس اجلاس میں خود بھی شرکت کرنے والی یو این ایچ سی آر پاکستان کی ترجمان دنیا اسلم خان نے جمعرات سولہ فروری کے روز ڈی ڈبلیو کے ساتھ گفتگو میں بتایا کہ سال دو ہزار سولہ کے دوران جنوری سے لے کر نومبر تک تین لاکھ اسّی ہزار سے زائد رجسٹرڈ افغان مہاجرین واپس گئے لیکن چونکہ پچھلے سال یکم دسمبر سے شدید سردی کی وجہ سے ان رجسٹرڈ مہاجرین کی افغانستان واپسی کا سلسلہ روک دیا گیا تھا، اس لیے اب یکم اپریل سے یہ سلسلہ دوبارہ شروع کیا جائے گا۔

دنیا اسلم خان نے کہا کہ ہر افغان مہاجر خاندان کو فی فرد چار سو ڈالر تک دیے جائیں گے۔ مثال کے طور پر اگر کسی خاندان میں آٹھ افراد شامل ہیں توانہیں بتیس سو ڈالر تک ادا کیے جائیں گے جو اچھی خاصی رقم ہو گی تاکہ یہ افغان باشندے واپس جا کر اپنے ملک میں نئی زندگی شروع کر سکیں۔

ایسے مہاجرین کو فی کس چار سو امریکی ڈالر کی ادائیگی کا یہ سلسلہ پچھلے سال جولائی میں شروع کیا گیا تھا۔ اس سے قبل تک فی مہاجر صرف دو سو ڈالر ادا کیے جاتے تھے۔

اسلام آباد منعقدہ تازہ اجلاس میں شریک افغان سفارتخانے کے ایک اہلکار نے ڈی ڈبلیو کو بتایا کہ اس اجلاس میں پاکستان میں مقیم غیر رجسٹرڈ افغان مہاجرین کو رجسٹر کرنے کے بارے میں بھی تفصیلی گفتگو ہوئی اور پاکستان اور افغانستان دونوں کے مابین اس بات پر اتفاق ہو گیا کہ دونوں ملکوں کے وفود مل بیٹھ کر یہ فیصلہ کریں گے کہ اس مسئلے کو کیسے حل کیا جائے۔

یو این ایچ سی آر کے مطابق اس وقت پاکستان میں تیرہ لاکھ رجسٹرڈ افغان مہاجرین موجود ہیں جبکہ چھ لاکھ غیر رجسٹرڈ افغان مہاجرین بھی پاکستان میں رہتے ہیں۔ تاہم کئی ماہرین کے مطابق پاکستان میں غیر رجسٹرڈ افغان مہاجرین کی اصل تعداد چھ لاکھ سے کہیں زیادہ ہے۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات