1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

پاکستان، موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات اور اندرون ملک مہاجرت

ایشیائی ترقیاتی بینک کے اندازوں کے مطابق 2050ء تک بنگلہ دیش اور پاکستان میں ڈھائی ملین سے زائد انسان ایسے مقامات پر زندگی بسر کر رہے ہوں گے جو منفی ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے نہایت خطرناک ہوں گے۔

پاکستانی ماہرین ماحولیات کا کہنا ہے کہ حالیہ سالوں میں پاکستان کے ساحلی علاقوں کو ترک کر کے دیگر مقامات کی طرف نقل مکانی کرنے والے باشندوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ اس کی وجہ سمندری پانی کی سطح میں اضافے اور نمک والے پانی کی آلودگی کا خوف ہے۔ ماہرین اس نقل مکانی کی مہم کو ابھی محض آغاز قرار دے رہے ہیں۔ ماہرین اور تحفظِ ماحولیات کے لیے سرگرم عناصر نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس صورتحال کا سختی سے نوٹس لے۔

سطح سمندر میں اضافہ

ماہی گیر محمد یوسف کی فیملی جنوبی پاکستان کے ساحلی علاقے ہاجامرو میں کئی نسلوں سے آباد ہے تاہم یہ جزیرہ جو کبھی ایک خوشحال گھر کی حیثیت رکھتا تھا اب ایک قید سے کم نہیں۔

اُس علاقے میں سمندری سطح مسلسل بڑھنے کے سبب آئے دن طوفانِ گرد و باد و آب کی وجہ سے یوسف کی ذاتی املاک بہہ گئیں۔ اُس کی مچھلیوں کے اسٹاک میں اتنی کمی پیدا ہوئی کہ اُس کے لیے اپنی فیملی کا پیٹ پالنا مُشکل ہو گیا۔ صحت کے گوناگوں مسائل کے شکار اُس کے بچے اب ہلاک ہو رہے ہیں۔

Flut in Asien August 2013 - Pakistan

پاکستان کے چند علاقے سیلاب کی زد میں رہتے ہیں

یوسف کی فیملی کی طرح کوئی 60 خاندان کیٹی بندر کے ایک درجن سے زائد مختلف جزیروں پر زندگی بسر کر رہے ہیں۔ کیٹی بندر پاکستان کے صوبہ سندھ کے ضلع ٹھٹھہ میں واقع ہے۔ 62 سالہ مچھیرا یوسف کہتا ہے،’’اگر ہمارے پاس کافی وسائل موجود ہوتے تو ہم پانچ سمال پہلے ہی ماہی گیری چھوڑ کر شہر ٹھٹھہ جا بسے ہوتے۔

پاکستان بھر میں لاتعداد خاندان سمندری سطح میں اضافے، خشک سالی، سیلاب اور موسمیاتی تبدیلیوں سے جُڑے دیگر مسائل کی وجہ سے گوناگوں مسائل کا شکار ہیں۔ جو خاندان خوش قسمتی سے مالی اعتبار سے بہتر ہیں وہ ایک علاقے سے ہجرت کر کہ کسی محفوظ علاقے کی طرف نقل مکانی بس جاتے ہیں لیکن جو اس کی استطاعت نہیں رکھتے وہ ان خطرناک علاقوں میں ہی اپنی بقا کی جنگ کر رہے ہیں۔

Überflutung in Pakistan Flash-Galerie

خُشک سالی بھی دور دراز بہت سے علاقوں کا ایک بڑا مسئلہ بنی ہوئی ہے

حکومتی ذمہ داریاں

پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی کے امور کی وزارت کے سیکرٹری عارف احمد خان کے مطابق پاکستان کا آئین دراصل حکومت کو پابند کرتا ہے کہ وہ ہر باشندے کو خوراک، رہائش اور تعلیم جیسی بنیادی ضروریات زندگی فراہم کرے تاہم حکام زیادہ تر اُن شہریوں کو تلافی معاوضہ دیتے ہیں جو ترقیاتی پروجیکٹس جیسے کے سڑک یا پُل کی تعمیر کی وجہ سے متاثر ہوتے ہیں۔ حکومت ایسے شہریوں کے لیے بمشکل کچھ کرتی ہے جو موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات کے خطرات سے بچنے کے لیے ایک علاقہ چھوڑ کر کسی دوسرے علاقے میں بسنا چاہتے ہیں۔

اسلام آباد میں قائم ایک غیر سرکاری ادارے ’پاٹن ڈیویلپمنٹ آرگنائزیشن‘ کے قومی رابطہ کار سرور باری کا کہنا ہے کہ اگر حکومت نے خشک سالی، طوفان اور زمینی تودے گرنےکا سبب بننےوالی بارش سے نمٹنے کے لیے ان آفات کے شکار علاقوں میں بسنے والوں کی مدد کے لیے اقدامات نہ کیے تو آئندہ چند سالوں میں اندرون ملک مہاجرت میں بہت زیادہ اضافہ ہوگا۔ انہوں نے کہا،’’ حکومت کو چاہیے کہ موسمیاتی تبدیلی سے جُڑی مہاجرت کو اپنی نیشنل کلائیمیٹ چینج پالیسی کا حصہ بنائے اور اپنے شہریوں کی ان حالات سے نمٹنے میں مدد کرے‘‘۔

Pakistan Umwelt

مچھیروں کا روزگار داؤ پر لگا رہتا ہے

ماہرین کے مطابق پاکستان کے موسمیاتی تبدیلیوں کے منفی اثرات سے دو چار علاقوں کے رہائشیوں کو بڑے شہروں کی طرف منتقل کرنے کے سوا کوئی دوسری صورت نظر نہیں آتی تاہم یہ بھی حقیقت ہے کہ زیادہ تر شہری علاقے پہلے ہی سے اتنے گنجاج آباد ہیں کہ وہاں کی صورتحال نہایت پیچیدہ ہے۔

DW.COM