1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پاکستان: دو فرانسیسی مبینہ عسکریت پسند حکومتی تحویل میں

پاکستانی سیکیورٹی ایجنسیوں نے بتایا ہے کہ فرانس کی شہریت رکھنے والے دو پاکستانیوں کو مبینہ طور پر القاعدہ سے تعلق رکھنے کے الزام میں دو ماہ قبل گرفتار کیا گیا تھا۔

default

پاکستان میں دہشت گردی کے واقعات معمول بن گئے ہیں

جمعرات کے روز پاکستان کے سیکیورٹی اہلکاروں نے تصدیق کی ہے کہ دو فرانسیسی شہریوں شرف دین اور ذوہیب افضل کو دو ماہ قبل پاکستان کے مرکزی شہر لاہور سے القاعدہ سے تعلق رکھنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔ یہ دونوں افراد حکومتی تحویل میں ہیں۔

حکومتی ہلکاروں کا کہنا ہے: ’یہ افراد وزیرستان جا کر عسکری تربیت حاصل کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے اور ان کے پاکستانی طالبان کے ساتھ روابط تھے‘۔

Karte Pakistan mit Waziristan

وزیرستان کا علاقہ القاعدہ اور طالبان عسکریت پسندوں کی آماج گاہ تصوّر کیا جاتا ہے

سکیورٹی افسران نے بتایا کہ گرفتار شدہ فرانسیسی شہریوں کو دو ماہ قبل لاہور کے بین الاقوامی ہوائی اڈّے سے گرفتار کیا گیا تھا اور دورانِ تفتیش انہوں نے یہ انکشافات کیے۔

اکتوبر دو ہزار دس میں شمالی وزیرستان میں جرمنی سے تعلق رکھنے والے آٹھ عسکریت پسندوں کے ایک امریکی ڈرون حملے میں ہلاک ہونے کی خبروں کے بعد مغربی ممالک میں یہ تشویش بڑھ گئی ہے کہ ان کے شہری پاکستان جا کر دہشت گردی کی تربیت حاصل کرتے ہیں اور اس کے بعد مغربی ممالک میں حملوں کی منصوبہ بندی کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ امریکہ میں گیارہ ستمبر کے دہشت گردانہ حملوں کے پیشِ نظر افغانستان پر طالبان اور القاعدہ کے خلاف امریکی حملوں کے بعد طالبان اور القاعدہ کے عسکریت پسندوں میں سے بیشتر نے پاکستان کے شمال مغربی قبائلی علاقوں میں پناہ لے لی تھی۔ پاکستانی افواج اور سیکیورٹی ایجنسیاں دہشت گردی کے خلای بین الاقوامی جنگ میں شریک ہیں اور شمالی علاقوں میں عسکری کارروائیاں کر رہی ہیں۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: افسر اعوان

DW.COM