1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پاکستان: خیبر میں گیارہ سیکیورٹی اہلکار اغواء

خبر رساں اداروں کے مطابق پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر سے نامعلوم مسلّح افراد نے خاصہ دار کہلائے جانے والے سیکیورٹی اہلکاروں کو اغواء کرلیا ہے۔

default

پاکستان کے قبائلی علاقوں میں طالبان کے ہاتھوں سیکیورٹی اہلکاروں کا اغواء معمول کی بات بن گیا ہے

افغانستان سے ملحق پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر میں نامعلوم مسلح افراد نے ایک چیک پوسٹ پر حملہ کرکے وہاں تعینات گیارہ خاصہ داروں کو اغواء کرکے نامعلوم جگہ پر منتقل کردیا ہے۔ اغوا ہونے والوں میں خاصہ دار فورس کا ایک صوبے دار بھی شامل ہے۔

Mindestens 48 Tote bei Bombenanschlag in einer Moschee in Jamrud Pakistan

چند روز قبل خیبر ایجنسی کے علاقے جمرود میں خود کش حملے کے نتیجے میں کم از کم ستر افراد ہلاک ہوگئے تھے


اطلاعات کے مطابق خیبر ایجنسی کی پولیٹکل انتظامیہ نے خاصہ داروں کی تلاش شروع کردی ہے اور اس کے لیے مقامی جرگے سے رابطہ کیا گیا ہے تاہم اب تک سیکیورٹی اہلکاروں کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ملی ہے۔ واقعے کی زمہ داری تاحال کسی گروہ یا تنظیم نے قبول نہیں کی ہے۔

واضح رہے کہ افغانستان سے ملحق پاکستان کے شمالی مغربی سرحدی علاقوں میں طالبان عسکریت پسندوں اور حکومت کے درمیان لڑائی کافی عرصے سے جاری ہے۔ حال ہی میں نئی جامع افغان پالیسی کا اعلان کرتے ہوئے امریکی صدر باراک اوباما نے ان علاقوں کو ’دنیا کا خطرناک ترین سرحدی علاقہ‘ قرار دیا۔ یہاں بعض علاقوں میں عملی طور پر طالبان عسکریت پسندوں کی عمل داری نافذ ہے۔

Chaos und Gewalt in Pakistan Besetzte Polizeistation nahe der afghanischen Grenze Musharraf verhängt Ausnahmezustand in Pakistan

بعض علاقوں می عملاً طالبان کی حکومت ہے


یاد رہے کہ ابھی چند روز قبل خیبر ایجنسی می تحصیل جمرود میں ایک خود کش حملے کے نتیجے میں ستر کے قریب افراد ہلاک ہوئے تھے اور ڈیڑھ سو سے زائد زخمی ہوئے تھے۔

ایک اور واقعے میں برقمبر نامی قبائلی علاقے میں شدّت پسند اسلامی تنظیم امربالمعروف کے چھ عہدیداروں کو بھی اغوا کرلیا گیا ہے۔ اس واقعے کو مختلف اسلامی عسکریت پسندوں کا اندرونی تنازعہ قرار دیا جا رہا ہے۔