1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان خطے کا اہم ملک ہے، وین جیا باؤ

چین کے وزیراعظم وین جیا باﺅ نے کہا ہے کہ پاکستان خطے کا ایک اہم ملک ہے اور ان کے دورہ ء پاکستان کا مقصد دونوں ممالک کی دوستی کو مزید مضبوط بنانا ہے۔

default

چینی وزیراعظم اپنے وفد کے ہمراہ اسلام آباد پہنچے تو ہوائی اڈے پر وزیراعظم یوسف رضا گیلانی، وفاقی کابینہ کے ارکان اور تینوں مسلح افواج کے سربراہان نے ان کا پرتپاک استقبال کیا۔

اس موقع پر سرکاری ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستانی وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ چین اور پاکستان میں انتہائی قریبی تعلقات ہیں جو کسی سے ڈھکے چھپے نہیں۔ ”چائنہ کے ساتھ ہمارے تعلقات لازوال ہیں جو کسی سے ڈھکے چھپے نہیں ہیں پوری قوم چین دوستی کے لئے متحد ہے۔‘‘

پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان عبدالباسط کا کہنا ہے کہ چینی وزیراعظم کے ہمراہ آنیوالا ڈھائی سو رکنی تجارتی وفد پاکستان میں مختلف شعبوں میں اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا۔ ” دونوں ممالک کی یہی کوشش ہے کہ ہمارے تعلقات میں معاشی اور اقتصادی عنصر کو زیادہ تقویت دی جائے۔اس لئے چینی وزیراعظم کے ہمراہ تقریباً 250 چینی بزنس بھی ساتھ ہیں۔ ہم 14 سے زائد معاہدوں اور یاد داشتوں پر دستخط کریں گے۔آپ جانتے ہیں ہماری دوطرفہ تجارت تقریباً اس وقت سات بلین ڈالر کے لگ بھگ ہے اور ہمارا ہدف ہے کہ 2015ء میں اس تجارت کو 15 بلین تک لے کر جائیں۔“

Indien China Besuch Wen Jiabao Dezember 2010

پاکستان آنے سے قبل چینی وزیر اعظم نے بھارت کا دوررہ کیا


خارجہ امور کے سابق سیکریٹری شمشاد احمد خان کا کہنا ہے کہ چینی رہنماﺅں کے دوروں کا پاکستان کے لئے ہمیشہ مثبت اثررہا ہے۔ ’’چائنہ پہلے ہی سرمایہ کاری کر رہا ہے اس لئے اقتصادی شعبے میں ہمیں امید کرنی چاہئے کہ اس دورے کے بہت اچھے نتائج نکلیں گے۔ جہاں تک خطے پر اس دورے کے اثرات کا تعلق ہے تو پاک، چین اقتصادی و سفارتی تعلقات کے خطے میں سلامتی اور سٹریٹجک لحاظ سے مثبت اثرات رہے ہیں اور آئندہ بھی ایسی توقعات ہیں۔“


پاکستان آنے سے قبل چینی وزیراعظم کے دورہ بھارت میں 16 ارب ڈالر کے تجارتی معاہدوں کو پاکستان میں خاصی اہمیت دی جا رہی ہے۔ تجزیہ نگار میجر جنرل(ر) جمشید ایازکا کہنا ہے کہ چین ایک ابھرتی ہوئی اقتصادی قوت ہے اس لئے اس کے بھارت کے ساتھ تعلقات بھی اقتصادی نوعیت کے ہیں جبکہ پاکستان کے ساتھ چین کی لازوال دوستی اور سٹریٹجک تعلقات ہیں۔

”اگر چین اور انڈیا قریب آ رہے ہیں تو اس سے ہمارا کوئی نقصان نہیں ہوتا بلکہ میرے خیال میں ہمارا فائدہ ہی ہوگاکیونکہ کشمیر کے معاملے پر پھر چین اپنا کردار ادا کر سکے گااور اس طرح مسئلہ کشمیر چین کی مدد سے حل ہو جائے گا۔ کیونکہ اگر چین کا انڈیا کے اوپر اثر و رسوخ ہوگا تو اس کا بہت اثر پڑے گا۔“

چینی وزیراعظم پاکستان میں اپنے قیام کے دوران سیاسی و فوجی قیادت کے ساتھ ملاقاتوں کے علاوہ تین ارب روپے کی لاگت سے اسلام آباد میں قائم کئے گئے پاک چائنہ فرینڈشپ سینٹر کا افتتاح بھی کرینگے۔ وین جیاباﺅ اتوار کے روز پاکستانی پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرینگے۔

رپورٹ: شکور رحیم ، اسلام آباد
ادارت : شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس