1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان جانے والا اسلحے سے لدا بحری جہاز پکڑا گیا، بھارتی پولیس

بھارتی پولیس کراچی جانے والے ایک بحری جہاز کے عملے سے تفتیش میں مصروف ہے جس میں مبینہ طور پر ’بھاری مقدار‘ میں اسلحہ اور گولہ بارود پایا گیا ہے۔

default

کولکتہ کے ساحل پر بھارتی کوسٹ گارڈز نے یہ جہاز جمعہ کو پکڑا۔ حکام کے مطابق اس جہاز میں آتش گیر مواد کی موجودگی کی اطلاع خفیہ ذرائع سے حاصل ہوئی۔

بھارتی ریاست مغربی بنگال میں پولیس کے ڈائریکٹر جنرل بھوپیندر سنگھ نے صحافیوں کو بتایا، ’’ کوسٹ گارڈز اور بحریہ کے اہلکاروں نے جہاز سے بڑی مقدار میں راکٹ لانچر، اینٹی ایئرکرافٹ گنز اور چند دیگر نوعیت کے بم برآمد کئے ہیں جو دو بڑے کنٹینروں میں رکھے گئے تھے۔‘‘

کولکتہ میں ہفتہ کو ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں سنگھ نے کہا کہ جہاز کے کپتان سے تفتیش کی جارہی ہے۔

بتایا جارہا ہے کہ 153 میٹر طویل MV Aegean Glory نامی یہ بحری جہازپاناما میں رجسٹرڈ ہے اور مونورویا، لائیبیریا، ماریشس اور چٹاگانگ سے ہوتا ہوا کولکتہ پہنچا تھا۔ بھارتی حکام کے بقول ابھی تک یہ واضح نہیں کہ یہ اسلحہ وگولہ بارود کس کے لئے لے جایا جارہا تھا۔ بھوپیندر سنگھ کے بقول جہاز کے کپتان نے

Pakistan SAARC Gipfel

بھارتی وزیر داخلہ پی چدمبرم اپنے پاکستانی ہم منصب رحمان ملک کے ہمراہ

جو دستاویزات فراہم کی ہیں ان میں ربط نہیں لہٰذا اب جہاز پر لدے تمام کنٹینر کھولے جائیں گے اور سامان کی مکمل جانچ کی جائے گی۔ بھارتی اہلکار اس واقعے کو انتہائی تشویشناک قرار دیتے ہوئے اس بات پر حیرت کا اظہار کر رہے ہیں کہ آخر یہ جہاز بھارتی سمندری حدود سے ہی کیوں گزر رہا تھا۔

یہ واقعہ ایسے وقت پیش آیا ہے جب پاکستان اور بھارت دہشت گردی کے خلاف مشترکہ کوششوں کے عزم کا اظہار کر رہے ہیں۔ اسلام آباد میں سارک ممالک کے وزرائے داخلہ کے اجلاس کے موقع پر دونوں ممالک کے اعلیٰ حکام نے ملاقات کی ہے۔ پاکستانی وزیر داخلہ رحمان ملک نے اپنے بھارتی ہم منصب پی چدمبرم سے ملاقات کے بعد کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان دوستی بڑھانے اور دہشت گردوں کے خلاف بھرپور کارروائی اصل مقصد ہے۔ رحمان ملک نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ دونوں ممالک کے تحقیقاتی ادارے ممبئی حملوں سمیت دہشت گردی سے متعلق دیگر معاملات پر ایک دوسرے سے رابطے میں رہیں۔

بھارتی وزیر داخلہ پی چدمبرم نے کہا کہ انہوں نے تمام ضروری تفصیلات پاکستان کو فراہم کیں ہیں۔ انہوں نے رحمان ملک سے ملاقات کی زیادہ تفصیلات نہیں بتائیں البتہ اتنا ضرور کہا کہ ممبئی حملوں میں کچھ اور لوگ بھی ملوث ہیں جن کے خلاف قانونی کارروائی کی جانی چاہئے۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: ندیم گِل

DW.COM