1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان ’باغی‘ گولن کے زیر انتظام اداروں کو بند کرے، ترکی کا مطالبہ

اسلام آباد میں ترکی کے سفیر صادق بابر نے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے ہاں مبلغ فتح اللہ گولن سے وابستہ اداروں کو بند کرے۔ صدر ایردوآن نے ترکی میں گولن سے تعلق کے شبے میں دو ہزار سے زائد اداروں پر پابندی بھی لگا دی ہے۔

پاکستانی دارالحکومت میں میڈیا کے نمائندوں کو ترکی کی صورت حال کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے ترک سفیر نے کہا، ’’ہم نے تمام دوست ممالک سے کہا کہ کہ وہ فتح اللہ گولن (مرکزی تصویر میں) کے گروپ کی سرگرمیوں کو روکنے کی کوشش کریں۔‘‘

ان کا کہنا تھا کہ ترک حکومت کے پاس ٹھوس شواہد ہیں کہ حال ہی میں صدر رجب طیب ایردوآن کی حکومت کے خلاف فوج کے ایک دھڑے کی جانب سے بغاوت کی ناکام کوشش کے پیچھے گولن کی تنظیم کا ہاتھ تھا۔

فتح اللہ امریکا میں مقیم ترک مبلغ ہیں جنہیں ایردوآن کی حکومت دہشت گرد قرار دیتی ہے۔ گولن کے قریبی ذرائع نے اس الزام کی تردید کی ہے کہ بغاوت کے پیچھے ان کی تنظیم کا ہاتھ تھا۔

پاکستان میں گولن کی تنظیم کتنی متحرک ہے؟

صادق بابر کاکہنا ہے کہ گولن تنظیم کی پاکستان میں موجودگی خاصی وسیع ہے۔

پاکستان میں گولن کی تنظیم کے زیر انتظام اکیس اسکول اور ایک رومی فاؤنڈیشن کام کر رہے ہیں۔ یہ ادارے کئی دہائیوں سے یہاں فعال ہیں۔

پاکستانی انگریزی اخبار ڈان کے مطابق حکومتی ذرائع سے اسے معلوم ہوا ہے کہ پاکستانی حکام نے گولن کے زیر انتظام چلنے والے اداروں کے خلاف کارروائی کے حوالے سے امکانات پر غور کرنا شروع کر دیا ہے۔

ایردوآن ’سولین مارشل لاء‘ کی جانب گامزن

ترک سفیر نے بہ بھی بتایا کہ انقرہ میں حکام نے امریکا سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ گولن کو ترکی کے حوالے کر دے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ امریکی نائب صدر جو بائیڈن نے انہیں یقین دلایا ہے کہ اس کے بارے میں غور کیا جائے گا۔

دوسری جانب ترک حکومت نے اپنے ملک میں بھی گولن سے وابستہ افراد اور تنظیموں کے گرد گھیرا تنگ کر دیا ہے۔ صدر ایردوآن کی جانب سے جاری کردہ ایک حکم نامے کے تحت دو ہزار تین سو اکتالیس اداروں، جن میں اسکول، فلاحی ادارے اور ہسپتال شامل ہیں، کو بند کر دیا گیا ہے۔ اس کارروائی کی پارلیمنٹ سے منظوری لی جانا باقی ہے، تاہم ایردوآن کی جماعت اے کے پی کی وہاں اکثریت کی بِنا پر اس کی منظوری تقریباً یقینی ہے۔

Türkei Ausnahmezustand: Folgen des Putsches

حکومت نے ناکام فوجی بغاوت کے بعد گرفتار کیے جانے والے کئی ہزار فوجیوں میں سے بارہ سو کو رہا کر دیا ہے

ایردوآن ملک میں کم از کم تین ماہ کے لیے ایمرجنسی بھی لگانا چاہ رہے ہیں۔ پارلیمنٹ کی جانب سے اس کی منظوری بھی جلد متوقع ہے۔

ملکی اور بین الاقوامی ناقدین کے مطابق نکام فوجی بغاوت کی آڑ میں صدر ایردوآن ترکی میں مطلق العنانیت کو فروغ دے رے ہیں اور ’سولین مارشل لاء‘ پر عمل پیرا ہیں۔

دریں اثناء حکومت نے ناکام فوجی بغاوت کے بعد گرفتار کیے جانے والے کئی ہزار فوجیوں میں سے بارہ سو کو رہا کر دیا ہے۔

ملتے جلتے مندرجات