1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پاکستان: بارہ طالبان عسکریت پسندوں کو رہا کردیا گیا

افغانستان سے ملحق پاکستانی صوبہِ سرحد میں حکّام نے بارہ طالبان عسکریت پسندوں کو رہا کردیا ہے۔

default

تئیس جنوری دو ہزار نو کو سوات سے تعلق رکھنے والے ایک ہزار افراد نے اسلام آباد میں حکومت کےخلاف مظاہرہ کیا تھا

طالبان عسکریت پسندوں کی یہ رہائی حال ہی میں حکومت اور طالبان کے درمیان کیے گئے ایک معاہدے کی بنیاد پر عمل میں آئی ہے۔ صوبہِ سرحد کے مالاکنڈ ڈویژن میں واقع شورش زدہ علاقے سوات میں حکومت اور طالبان نفاذِ شریعت سے متعلق ایک معاہدے پر دستخط کرچکے ہیں جس کو ’نظامِ عدل‘ کا نام دیا گیا ہے۔ مذکورہ معاہدے کے تحت جہاں عسکریت پسند ہتھیار پھینکنے کے پابند ہیں وہاں حکومت حراست میں لیے گئے طالبان عسکریت پسندوں کو رہا کرنے کی بھی پابند ہے۔

Chaos und Gewalt in Pakistan Besetzte Polizeistation nahe der afghanischen Grenze Musharraf verhängt Ausnahmezustand in Pakistan

سوات کے علاقے میں عملاً طالبان کا کنٹرول ہے

طالبان عسکریت پسندوں کی یہ رہائی ممکنہ طور پر مغربی ممالک کے لیے باعثِ تشویش ہوسکتی ہے جن کی افواج کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں خاص طور پر افغانستان میں مشکلات کا سامنا ہے۔ عسکری اور دفاعی مبصرین کی رائے میں پاکستان اور افغانستان کے درمیان قبائلی علاقے افغانستان میں شورش کا منبع ہیں۔ القاعدہ اور طالبان کی قیادت کے اسی علاقے میں روپوش ہونے کا بھی امکان ظاہر کیا جاتا رہتا ہے۔

Pakistan Präsident Asif Ali Zardari vereidigt

معتدل طالبان کے ساتھ مذاکرات کر رہے ہیں، پاکستانی صدر آصف زرداری


پاکستانی حکّام کے مطابق طالبان عسکریت پسندوں کو ہفتے کی شب رہا کیا گیا۔ حکّام کے مطابق یہ ان کی جانب سے طالبان کے لیے خیر سگالی کا ایک پیغام ہے اور ان کو امید ہے کہ اس کے جواب میں طالبان سوات میں امن قائم کرنے کے لیے اپنی زمہ داری پوری کریں گے۔

دریں اثناء پاکستانی حکّام نے بتایا ہے کہ مہمند ایجنسی کے علاقے میں طالبان نے ایک جھڑپ میں دس پولیس اہلکاروں کو قتل کردیا ہے۔ ایک حکومتی اہلکار اور تین پولیس اہلکاروں کو طالبان نے یرغمال بنا نے کے بعد مار کر پھینک دیا۔

Kinder und Frauen flüchten aus den umkämpften Gebieten

پاکستانی صدر آصف زرداری کا کہنا ہے کہ حکومت طالبان عسکریت پسندوں کے ساتھ نہیں بلکہ معتدل مذہبی رہنماؤں سے سوات میں مذاکرات کررہی ہے۔ واضح رہے کہ سوات میں طالبان رہنما صوفی محمّد نے حکومت کو پندرہ مارچ تک کی مہلت دی ہے کہ ان کے تمام مطالبات تسلیم کرلیے جائیں۔

سوات کے علاقے میں اسکولوں اور کاروباری مراکز کے دربارہ کھل جانے کے بعد بھی صورتِ حال معمول کے مطابق نہیں ہے اور علاقے کے لوگ اور سیاسی مبصرین حکومت اور طالبان کے درمیان معاہدے کے دیر پا ہونے پر متشکک ہیں۔