1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان ایک بار پھر عدالتی بحران کی زد میں

''حکومت عدلیہ کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ پاکستان کا آئین اس بارے میں بالکل واضح ہے'', سپریم کورٹ کے وکیل بابر بلال کی کشور مصطفیٰ کے ساتھ خصوصی گفتگو۔

default

ججوں کی تقرری کے معاملے پر سپریم کورٹ کی طرف سے اٹھارہ فروری کو وزارت قانون کے ایڈیشنل سیکریٹری کو مقدمے کی سماعت کے لئے طلب کر لیا گیا ہے۔ پاکستان میں ایک بار پھر عدالتی اور آئینی بحران اٹھتا دکھائی دے رہا ہے۔ حکومت کی جانب سے ایک سینئر جج کی تقرری کے معاملے پر اٹھنے والا تنازعہ صدر مملکت آصف علی زرداری کے لئے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کے ساتھ تصادم کا باعث بنتا دکھائی دے رہا ہے۔

حالیہ تنازعہ اُس وقت اٹھا جب صدر زرداری نے چیف جسٹس افتخار چودھری کی طرف سے نامزد امیدوار کی سپریم کورٹ کے لئے تقرری کو مبینہ طور پر نظر انداز کر تے ہوئے ایک دوسرے سینئیر جج کو اس عہدے کے لئے نامزد کرنے کا فیصلہ سنایا۔

Ankunft des pakistanischen Präsidenten Asif Ali Zardari beim SCO-Treffen 2009

صدر مملکت آصف علی زرداری

ہفتے کی شام کو عدالت عظمیٰ نے ہنگامی طور پر ایک تین رکنی بنچ تشکیل دینے کا اعلان کیا جس نے لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس خواجہ محمد شریف کو سپریم کورٹ کا جج بنانے اور ان کی جگہ جسٹس ثاقب نثار کو قائم مقام صوبائی چیف جسٹس مقرر کرنے کے صدارتی احکامات کو کالعدم قرار دیتے ہوئے اسے معطل کرنے کا فیصلہ سنا دیا، ساتھ ہی سپریم کورٹ نے اس مقدمے کی سماعت کے لئے 18 فروری کی تاریخ مقرر کی ہے۔

ان معاملات کی تفصیلات بتاتے ہوئے ڈوئچے ویلے کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں سپریم کورٹ کے ایک سینئر وکیل بابر بلال نے الزام عائد کیا کہ حکومت اپنی پسند کے ججز کو ہائی کورٹ میں اپوائنٹ کروانا چاہ رہی تھی جس میں حکومت کو مشکلات کا سامنا تھا۔

ان کے بقول ، '' لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس خواجہ محمد شریف نے ان اپوائنمٹس کے لئے ناموں کی جو فہرست بھیجھی تھی وہ حکومت کو منظور نہیں تھی اس لئے اُس لسٹ کو پہلے گورنر پنجاب نے اپنے پاس روکے رکھا اسکے بعد لاء منسٹری میں پہنچنے کے بعد اُس فہرست کو وہاں روک لیا گیا''۔ بابر بلال نے کہا کہ، '' حکومت نے عدلیہ کے اندر ہی ایک بار پھر عدم اتحاد پیدا کروانے کی کوشش کی اور خود ہی چند ججز کی تقرری کا اعلان کر دیا، جبکہ پاکستان کا آئین اس بارے میں بالکل واضح ہے کہ سپریم کورٹ میں ججوں کی تقرری آرٹیکل 177 کے تحت چیف جسٹس آف پاکستان کی مشاورت سے کی جائے گا''۔

Pakistan Oberster Richter Iftikhar Mohammed Chaudhry abgesetzt

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری

اس سوال کے جواب میں کہ آخر حکومت نے اتنا بڑا قدم کیوں کر اُٹھایا بابر بلال کا کہنا تھا کہ، '' غالباً حکومت یہ توقع کر رہی تھی کہ اس کی جانب سے نوٹیفیکیشن جاری کرنے کے بعد عدالت اسے تسلیم کر لے گی اور یہ ججز حلف لے لیں گے''۔ تاہم بابر کا کہنا ہے کہ ہوا اس کے بر عکس کیوں کہ ان کے بقول سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کے ججز آپس میں متحد ہیں۔

سپریم کورٹ کے وکیل بابر بلال کے مطابق'' اسی وجہ سے سپریم کورٹ نے اس معاملے پر خود قدم اٹھایا ہے اور اس کی طرف سے صدارتی احکامات کو کلعدم قرار دینے کا عمل بالکل آئین کے مطابق ہے''۔ بابر بلال کا کہنا ہے کہ ایک ایسے وقت میں جب کہ ملک گوناگوں اندرونی اور بیرونی دباؤ اور مسائل سے دو چار ہے، اس قسم کے عدالتی بحران ملک کو مزید کمزور کرنے کا باعث بنیں گے۔ بلال نے کہا'' 18 فروری کو اس کیس کی سماعت غیر معمولی اہمیت کی حامل ہے، صدر کا عہدہ بھی خطرے میں پڑ سکتا ہے، آئندہ چند دن ملک کے لئے اہم ہوں گے''۔

سپریم کورٹ کے وکیل بابر بلال کی ڈوئچے ویلے کے ساتھ تفصیلی گفتگو سننے کے لئے آڈیو فائل پر کلک کیجئے۔

رپورٹ : کشور مصطفیٰ

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM

Audios and videos on the topic