1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے درمیان ایک روزہ میچوں کی سیریز آج سے شروع

ویسٹ انڈیز کے دورے پر گئی پاکستانی کرکٹ ٹیم آج سے پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز کا آغاز کرے گی۔ پاکستانی ٹیم اس دورے کا واحد ٹی ٹوئنٹی میچ ہار چکی ہے۔

default

پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز کے پہلے دو میچ سینٹ لوسیا کے گروس آئلیٹ میں کھیلے جائیں گے۔ پہلا میچ تیئس اپریل کو کھیلا جائے گا اور دوسرا میچ پچیس اپریل کو اسی میدان میں کھیلا جائے گا۔

یہ امر اہم ہے کہ گروس آئلیٹ کے میدان پر دو روز قبل پاکستانی کرکٹ ٹیم اپنا پہلا میچ ہار گئی تھی۔ ٹی ٹوئنٹی کا میچ نامناسب بیٹنگ کی وجہ سے پاکستانی ٹیم ہار ی تھی۔ اس میچ میں پاکستانی ٹیم کو صرف سات رنز سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ عمر اکمل اور سعید اجمل کے علاوہ کسی اور بیٹسمین نے ذرا بھی ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہوتا تو شکست کو جیت میں تبدیل کیا جا سکتا تھا۔ خاص طور پر مصباح الحق جس غیر ذمہ داری سے ہٹ وکٹ آؤٹ ہوئے تھے، وہ میچ کا ٹرننگ پوائنٹ تھا۔

سینٹ لوسیا میں دو میچ کھیلنے کے بعد پاکستانی ٹیم برج ٹاؤن روانہ ہو جائے گی۔ برج ٹاؤن کا شہر کیر یبیئن کے بڑے جزیرے باربیڈوس کا دارالحکومت ہے۔ اگلے دو میچ برج ٹاؤن میں کھیلے جائیں گے۔ برج ٹاؤن ویسٹ انڈیز میں کرکٹ کے دیوانوں کا شہر تصور کیا جاتا ہے۔ تیسرا ایک روزہ میچ اٹھائیس اپریل اور چوتھا دو مئی کو کھیلا جائے گا۔ آخری میچ گیانا کے پراویڈنس گراؤنڈ پر پانچ مئی کو کھیلا جائے گا۔ پانچ ایک روزہ میچوں کے بعد پاکستانی کرکٹ ٹیم دو پانچ روزہ ٹیسٹ میچ کھیلے گی۔

T 20 Cricket World Cup 2010

ویسٹ انڈیز کے تیز بالر اہم کردار ادا کریں گے

تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ پاکستانی کرکٹ ٹیم میں چند نئے نام ضرور ہیں لیکن کھلاڑی مسلسل بین الاقوامی میچوں کی عدم دستیابی کی وجہ سے دوران میچ پریشر لے لیتے ہیں اور فوکس کرنے سے محروم دکھائی دیتے ہیں۔ اس کی وجہ پاکستانی سرزمین پر سکیورٹی کی مخدوش صورت حال کے تناظر میں بنی الاقوامی کرکٹ کا نہ ہونا ہے۔ اس رویے کا مظاہرہ پہلے ٹی ٹوئنٹی میں بھی دیکھا گیا۔ بیٹسمین لمبی اننگ کھیلنے کی عادت ہی نہیں رکھتے۔

دوسری جانب ویسٹ انڈیز کی ٹیم بھی نئے کھلاڑیوں کے ساتھ پاکستان کا سامنا کرے گی۔ سینئر کھلاڑیوں کو شاید بورڈ نے دانستہ طور پر ریسٹ دیا ہوا ہے۔اس کی ایک وجہ پاکستان کے بعد بھارتی ٹیم کا دورہ بھی ہو سکتا ہے۔ ویسٹ انڈیز کی ٹیم میں ایک حوصلہ افزاء اضافہ مارلن سیموئلز کی واپسی ہے۔ وہ پابندی کا سامنا کر رہے تھے۔ سیموئلز زوردار بلے باز ہیں اور میچ کی صورت تبدیل کر سکتے ہیں۔

پاکستانی ٹیم نے نئے وکٹ کیپر محمد سلمان سے توقعات وابستہ کر رکھی ہیں۔ اسی طرح اس دورے پر اسد شفیق اور احمد شہزاد بھی اپنی کارکردگی کو بہتر کر سکتے ہیں۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارؤ، ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس