1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان اور ترکی: بحری جہازوں اور طیاروں کی فروخت کا معاہدہ

پاکستان اور ترکی نے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کر دیے ہیں جس کی رو سے ترکی پاکستان کو چار چھوٹے جنگی بحری جہاز فراہم کرے گا جبکہ پاکستان ترکی کو ملک میں تیار کردہ 52 تربیتی طیارے فروخت کرے گا۔

Pakistan IDEAS 2016 in Karachi (DW/R. Saeed)

ترکی پاکستان ایروناٹیکل کمپلکس کامرہ سے 52 سپر مشاق تربیتی طیارے خریدے گا

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اس بات کا اعلان ترکی کی دفاعی انڈسٹری سے متعلق محکمے کی طرف سے آج بدھ 10 مئی کو کیا گیا ہے۔ اس اعلان کے مطابق کراچی شپ یارڈ (KS&EW) ترکی سے چار چھوٹے جنگی بحری جہاز خریدے گا۔ یہ بحری جہاز ترکی کے MILGEM وارشپ پروگرام کے تحت تیار کیے جاتے ہیں۔ پاکستان کی طرف سے ان بحری جنگی جہازوں کی خرید کا مقصد اپنے چھوٹے اور درمیانے سائز کے بحری جہازوں یا فریگیٹس کا ایک ایسا وسیع المقاصد فلِیٹ تیار کرنا ہے جو پاکستانی بحریہ کے زیر استعمال پرانے جہازوں کی جگہ لے گا۔

ترکی کے ڈیفنس انڈر سیکرٹریٹ کے مطابق حتمی معاہدے پر دستخط 30 جون کو متوقع ہیں۔ روئٹرز کے مطابق ان معاہدوں کے حوالے سے جاری ہونے والے بیان میں تاہم ان کی مالیت کے بارے میں کوئی تفصیلات نہیں بتائی گئیں۔

Türkisches Kriegsschiff vor Zypern (AP)

ترکی کے  MILGEM وارشپ پروگرام کے تحت اب تک دو بحری جنگی جہاز تیار کیے جا چکے ہیں

انقرہ کے ڈیفنس انڈر سیکرٹریٹ کی طرف سے جاری کردہ اعلان کے مطابق ترکی پاکستان ایروناٹیکل کمپلکس کامرہ سے 52 سپر مشاق تربیتی طیارے خریدے گا۔ یہ طیارے ترک فضائیہ کے اس وقت زیر استعمال T-41 اور SF-260 طیاروں کی جگہ لیں گے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق اس بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ یہ پہلا موقع ہو گا کہ مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کا کوئی رکن ملک سپر مشاق جہازوں کو استعمال کرے گا۔

ترکی کے  MILGEM وارشپ پروگرام کے تحت اب تک دو بحری جنگی جہاز تیار کیے جا چکے ہیں جو ترک نیوی کو 2011ء اور 2013ء میں فراہم کر دیے گئے تھے۔ اس کے علاوہ دو دیگر بحری جنگی جہازوں کی تیاری کا کام جاری ہے اور یہ جہاز بالترتیب 2018ء اور 2020ء میں ترک بحریہ کے حوالے کر دیے جائیں گے۔