1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان اور ایران بارڈر سکیورٹی بڑھانے پر متفق

پاکستان اور ایران نے اپنی مشترکہ سرحد پر سکیورٹی بڑھانے پر اتفاق کر لیا ہے۔ ایک ہفتہ پہلے ہی مسلح افراد نے دس ایرانی سکیورٹی اہلکاروں کو ہلاک کر دیا تھا، جس کے بعد تہران حکومت نے اسلام آباد سے شدید احتجاج کیا تھا۔

پاکستان کے دورے پر گئے ہوئے ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے آج دارالحکومت اسلام آباد میں وزیر اعظم نواز شریف کے ساتھ ساتھ وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان سے بھی ملاقاتیں کیں اور خطّے میں امن و استحکام پر بات چیت کی۔

 وزارتِ داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق پاکستان اور ایران کے مابین گزشتہ ہفتے کے اُس واقعے کے بعد سے مشترکہ سرحد پر سکیورٹی کے اقدامات مزید مستحکم بنانے پر اتفاق ہو گیا ہے، جس میں مسلح افراد نے دَس ایرانی گارڈز کو ہلاک کر دیا تھا۔ مشترکہ سرحد پر تعینات فورسز کے درمیان ہاٹ لائن کی بحالی پر بھی اصولی اتفاق رائے پایا گیا۔

Pakistan Präsident Nawaz Sharif (R) und Irans Außenminster Mohammed Dschawad Sarif (picture-alliance/AP Photo/Pakistan Press Information Department)

پاکستانی وزیراعظم نے ایرانی وزیر خارجہ سے ملاقات کےدوران ایرانی سکیورٹی اہلکاروں کی ہلاکت پر دکھ کا اظہار کیا

پاکستانی وزیراعظم نے ایرانی وزیر خارجہ سے ملاقات کےدوران ایرانی سکیورٹی اہلکاروں کی ہلاکت پر دکھ کا اظہار کیا جبکہ خطے کی سکیورٹی اور استحکام پر بھی بات ہوئی۔ چند روز پہلے پاکستانی فوج کے سابق سربراہ جنرل راحیل شریف نے سعودی قیادت میں بننے والے فوجی اتحاد میں عہدہ سنبھالا تھا، جس پر ایران نے اپنے تحفظات کا اظہار کیا تھا۔

پاکستان پہلے ہی یہ کہہ چکا ہے کہ وہ کسی مسلمان ملک کے خلاف ہونے والی کسی بھی کارروائی کا حصہ نہیں بنے گا۔ قبل ازیں پاکستان اپنے فوجی یمن میں بھیجنے کی سعودی درخواست بھی مسترد کر چکا ہے۔