1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستان اور افغانستان کے لیے خصوصی امریکی مندوب مِلر مستعفی

ایک ایسے وقت پر جب ٹرمپ انتظامیہ امریکا کے مزید ہزاروں فوجیوں کو جنگ زدہ ملک افغانستان بھیجنے کی تیاریاں کر رہی ہے، پاکستان اور افغانستان کے لیے خصوصی امریکی مندوب لارَل مِلر نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

امریکی دارالحکومت واشنگٹن سے ہفتہ چوبیس جون کو موصولہ نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق واشنگٹن میں محکمہ خارجہ کے ایک اعلیٰ اہلکار نے بتایا کہ پاکستان اور افغانستان کے لیے امریکا کے قائم مقام خصوصی مندوب مِلر نے جمعہ تئیس جون کو اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا اور ابھی تک ان کے کسی جانشین کی نامزدگی بھی عمل میں نہیں آئی۔

Symbolbild zum Dreiergipfel USA Afghanistan Pakistan

امریکی اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کی ایک خاتون ترجمان نے اے ایف پی کو بتایا، ’’لارَل مِلر رَینڈ کارپوریشن میں ایک عہدے پر واپس جا رہے ہیں اور وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن نے ابھی تک یہ فیصلہ نہیں کیا کہ یہ ذمے داری آئندہ کس شخصیت کے سپرد کی جائے گی۔‘‘

امریکی خ‍ارجہ سیاست میں یہ عہدہ اس وقت تخلیق کیا گیا تھا جب امریکی حکام اس نتیجے پر پہنچے تھے کہ پاکستان اور افغانستان میں تنازعات ایک دوسرے سے ناقابل تفریق حد تک جڑے ہوئے ہیں اور اسی لیے ان سے مشترکہ طور پر نمٹا جانا ضروری ہے۔

اس کے علاوہ یہ بات بھی اہم ہے کہ اس سال جنوری میں اپنا عہدہ سنبھالنے کے بعد سے صدر ڈونلڈ ٹرمپ اس کوشش میں ہیں کہ واشنگٹن حکومت کے سفارتی اخراجات کم کیے جائیں جبکہ وزیر خارجہ ٹلرسن کا بھی یہی ارادہ ہے کہ امریکی خارجہ سیاست میں متعدد خصوصی مندوبین کے عہدے ختم کر دیے جائیں۔

کابل اور نئی دہلی کے مابین فضائی تجارتی راہداری قائم

پاکستان سے متعلق ٹرمپ کی پالیسی: ’زیادہ ڈرون حملے زیر غور‘

افغانستان میں پاکستانی قونصل خانے کے دو اہلکار لاپتہ

اے ایف پی کے مطابق لارَل مِلر کا فوری طور پر یا شاید آئندہ بھی کوئی جانشین مقرر نہ کیے جانے کی صورت میں اب یہ ذمے داریاں قلیل المدتی یا طویل المدتی بنیادوں پر امریکی محکمہ خارجہ کے جنوبی اور وسطی ایشیائی امور کے بیورو کے حوالے کر دی جائیں گی، جس کے فرائض کا دائرہ کار پہلے ہی کافی وسیع ہے اور جس میں بھارت کے ساتھ معاملات بھی شامل ہیں۔

London US-Außenminister Tillerson mit Johnson

امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن

لیکن اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے اس جنوبی اور وسطی ایشیائی امور کے بیورو کا ایک مسئلہ یہ بھی ہے کہ خود اس کا اپنا بھی کوئی سربراہ نہیں ہے۔ محکمہ خارجہ کے اس بیورو جیسے ذیلی شعبوں کا سربراہ عام طور پر کوئی ایسا امریکی سفارت کار ہوتا ہے، جو اپنے عہدے کے لحاظ سے نائب وزیر خارجہ ہوتا ہے۔

اے ایف پی نے لکھا ہے کہ فوری طور پر افغانستان اور پاکستان سے متعلق خصوصی مندوب کی ذمے داریاں بھی اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے جنوبی اور وسطی ایشیائی امور کے بیورو کو منتقل تو ہو گئی ہیں لیکن بغیر کسی سربراہ کے کام کرنے والے اس شعبے کی قیادت کے لیے بھی ابھی تک ٹرمپ انتظامیہ نے کوئی بھی نام منظوری کے لیے امریکی سینیٹ کو نہیں بھیجا۔

لارَل مِلر کے استعفے اور ان کے عہدے کے ممکنہ خاتمے کے بارے میں جب آن لائن نیوز ویب سائٹ ’پولیٹیکو‘ نے اپنی ایک رپورٹ شائع کی، تو ساتھ ہی کئی سرکردہ سفارت کاروں کی اس شکایت کا ذکر بھی کیا گیا تھا کہ محکمہ خارجہ نے یہ فیصلہ بہت عجلت میں کیا ہے اور ’قیادت کا یہ خلا بہت خطرناک‘ ثابت ہو سکتا ہے۔

DW.COM