1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

پاکستان: انتخابات کے ایک سال بعد

تقریباً ایک عشرے کی فوجی حکومت کے بعد پاکستان میں آنے والی جمہوریت سے سب نے بہت زیادہ توقعات وابستہ کر رکھی تھیں۔

default

فروری دو ہزار آٹھ کے عام انتخابات کے نتائج سامنے آنے کے بعد لاہور شہر میں مسلم لیگ ن کے حامی جشن منارہے تھے

نہ صرف پاکستان بلکہ عالمی برادری کا بھی پرویز مشرف پر سے اعتماد اٹھ چکا تھا، جو ہر قیمت پر برسر اقتدار رہنا چاہتے تھے۔

بہت سے لوگوں نے یہ امیدیں لگا رکھی تھیں کہ ایک جمہوری حکومت عسکریت پسندوں کے خلاف جنگ میں عوام کو بہتر طریقے سے متحرک کر سکے گی تاہم ایک سال بعد بھی یہ بات واضح نہ ہو سکی کہ فوج نے سیاست سے کس حد تک دوری اختیار کر لی ہے۔

Machtkampf in Pakistan

سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف اُس وقت کے وائس چیف اور موجودہ چیف آف پاکستان آرمی جنرل اشفاق پرویز کیانی کے ہمراہ .

برلن کے ماہر سیاسیات وولف گانگ میرکل نے پاکستان کی جمہوریت کو ناقص قرار دیتے ہوئے کہا:’’فوج اپنے لئے ایک طرح سے چھا جانے والے کردار کا حق جتاتی ہے۔ اس صورت میں بھی جب آزادانہ انتخابات ہو چکے ہوں۔‘‘

بیشتر پاکستانی سیاستدانوں کا خیال ہے کہ جمہوریت پسندوں نے فوج کو اقتدار سے پیچھے ہٹنے پر مجبور کیا ہے۔ ملک کی دوسری بڑی جماعت مسلم لیگ ن کے جنرل سیکریٹری احسن اقبال کہتے ہیں: ’’عوام نے ہر ڈکٹیٹر کو جمہوری طریقے سے پسپا ہونے پر مجبور کیا۔ ہر ڈکٹیٹر کو کبھی نہ کبھی انتخابات کرانے پڑتے ہیں۔ اس کے سامنے اور کوئی چارہ نہیں ہوتا۔ سول معاشرے نے ہر ڈکٹیٹر کے خلاف جد وجہد کی اور اسے پیچھے ہٹنے پر مجبور کیا۔‘‘

Pakistan Demonstration für Richter Iftikhar Mohammed Chaudhry

پاکستانی وکلاء معزول چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی بحالی کے لئے زبردست طریقے سے سرگرم تھے

ایک سال تک لوگوں نے وکیلوں کی قیادت میں مشرف کے خلاف مظاہرے کئے کیوں کہ انہوں نے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا تھا۔ ایک سال قبل کے انتخابات کے بعد دونوں بڑی جماعتوں پی پی پی اور مسلم لیگ ن کے اتحاد سے بڑی مخلوط حکومت قائم ہوئی لیکن مسلم لیگ ن کو جلد ہی پیچھے ہٹنا پڑا کیوں کہ پی پی پی کے سربراہ آصف زرداری معزول چیف جسٹس افتخار چوہدری کو ان کے عہدے پر بحال کرنے کے وعدے سے پھر گئے تھے۔

وفاقی جرمن پارلیمان کے ممبر ڈیٹلیف ڈسیمبرٹسکی نے پاکستانی انتخابات کے بارے میں کہا: ’’یہ نہ دیکھا جائے کہ کن جماعتوں نے کامیابی حاصل کی بلکہ یہ کہ کن جماعتوں کو عوام نے ووٹ نہیں دئیے۔ قابل غور بات یہ ہےکہ انتہا پسندوں کو کہیں بھی کامیابی حاصل نہ ہو سکی۔‘‘