1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان یونس خان مستعفی

کپتان یونس خان نے یہ فیصلہ آج اپنے اوپر لگے میچ فکسنگ کے الزام پر پارلیمنٹ کی قائمہ کمیٹی برائے کھیل کے سامنے پیش ہونے کے بعد کیا۔

default

اس کمیٹی کے سامنے ان کے ساتھ کوچ انتخاب عالم اور چیئرمیں پاکستان کرکٹ بورڈ اعجاز بٹ بھی موجود تھے۔ میچ فکسنگ کا الزام چیئرمین قائمہ کمیٹی جمشید دستی کی طرف سے لگایا گیا جن کا کہنا تھا: " میرے پاس میچ فکسنگ کے ثبوت ہیں جو یہ ثابت کر سکتے ہیں کہ چیمپئنز ٹرافی کے آخری گروپ میچ میں آسڑیلیا کے ساتھ اور سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کے ساتھ بہتر کارکردگی نہ دکھا نے کی وجہ صرف میچ فکسنگ ہی ہے۔"

Pakistanische Spieler im Freudentaumel

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی کے چیئرمین جمشید دستی نے پاکستانی ٹیم پر میچ فکسنگ کا الزام لگایا گیا

چیئرمین کرکٹ بورڈ اعجازبٹ کی طرف سے استعفٰی منظور کرنے کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ وہ معاملے کو یونس کے ساتھ ڈسکس کریں گے اور آئی سی سی کے اینٹی کرپشن یونٹ کی رپورٹ کو بھی سامنے رکھیں گے، یادرہے کہ اس معاملے کی چھان بین آئی سی سی بھی کر رہی ہے۔ دوسری طرف کپتان یونس خان کا کہنا ہے کہ وہ مستعفی ہونے کے اپنے فیصلے پر قائم ہیں۔

واضح رہے کہ اسی سال کپتان یونس خان ہی کی قیادت میں پاکستانی ٹیم ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ جیت چکی ہے۔ چیمپئنز ٹرافی ہارنے پر قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے کھیل کے چیئرمین کی طرف سے لگا ئے گئے اس الزام پر پاکستانی کرکٹ کے حالات کس رخ پر جائیں گے، یہ کہنا قبل از وقت ہوگا۔ مگر ایک بات جو پاکستانی کرکٹ پر بہت اثر انداز ہوتی ہے وہ ذرائع ابلاغ میں اس قسم کے پنڈورا بکس کا کھل جانا، جو ہر لحاظ سے ٹیم مینیجمنٹ، ٹیم کی قیادت، اور عوام میں اس کھیل کی مقبولیت پر بری طرح اثر انداز ہوتا ہے۔

رپورٹ: عبدالرؤف انجم

ادارت: افسر اعوان