1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستانی چیک پوسٹ پر درجنوں طالبان کا ایک اور خونریز حملہ

شمال مغربی پاکستان میں آج اتوار کے روز قریب دو درجن طالبان کی طرف سے پولیس کی ایک چیک پوسٹ پر ایک اور خونریز حملہ کیا گیا، جس میں کم از کم تین پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے۔

default

صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق یہ حملہ اتوار کو طلوع آفتاب سے پہلے کیا گیا۔ حملہ آور عسکریت پسند راکٹ لانچروں اور خودکار ہتھیاروں سے مسلح تھے۔ اس حملے میں ایک پولیس اہلکار زخمی بھی ہوا۔

فرانسیسی خبر ایجنسی اے ایف پی نے بتایا کہ طالبان شدت پسندوں کی طرف سے یہ حملہ صوبے کے بد امنی کے شکار علاقے شانگلہ میں کیا گیا۔ یہ جگہ وادی سوات کے قریب ہے، جہاں سن دو ہزار نو کے اوائل میں پاکستانی فوج نے ایک طویل آپریشن بھی کیا تھا۔ تب اس آپریشن کی تکمیل پر فوج کی طرف سے یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ سوات کی پوری وادی کو شدت پسندوں سے پاک کر دیا گیا تھا۔

NO FLASH Anschlag in Peschawar Pakistan

بن لادن کی ہلاکت کے بعد سے عسکریت پسندو‌ں کے حملوں میں اضافہ ہوا ہے

شانگلہ میں پولیس کے سربراہ جہانزیب خان نے اے ایف پی کے ساتھ ٹیلی فون پر گفتگو میں تصدیق کی کہ آج اس ضلع میں پولیس چیک پوسٹ پر کیے گئے حملے میں تین پولیس اہلکار اہلاک اور ایک زخمی ہو گیا۔ جہانزیب خان کے مطابق طالبان قریبی پہاڑوں سے اتر کر آئے اور الپوری کے علاقے میں چیک پوسٹ پر حملے کے بعد فرار ہونے میں کامیاب بھی ہو گئے۔

پاکستان میں ملکی فوج کی طرف سے سن دو ہزار سات میں ملکی دارالحکومت اسلام آباد کی لال مسجد پر ایک بڑے آپریشن میں بہت سے شدت پسندوں کے خلاف خونریز کارروائی کی گئی تھی۔ اس کے بعد سے مقامی طالبان کے پاکستان کے شہری اور قبائلی علاقوں میں مسلح حملوں اور بم دھماکوں میں تیزی آ چکی ہے۔ ان حملوں میں اب تک ساڑھے چار ہزار افراد مارے جا چکے ہیں۔

دو مئی کو ایبٹ آباد میں امریکی فوجی کمانڈوز کے ہاتھوں القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد سے پاکستان میں طالبان کی یہی کارروائیاں اور بھی زیادہ اور خونریز ہو چکی ہیں۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: شامل شمس

DW.COM

ویب لنکس