1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستانی پولیس نے نیٹو کا سامان برآمد کر لیا

پاکستانی پولیس نے کہا ہے کہ افغانستان میں تعینات نیٹو افواج کا چوری شدہ سامان پشاور سے برآمد کر لیا گیا ہے۔ اس سامان میں امریکی فوجیوں کی جیکٹوں کے علاوہ لیپ ٹاپ کمپیوٹر اوردیگر سامان شامل ہے۔

default

درہ خیبر نیتو سامان کی افغانستان ترسیل کے لئے ایک اہم پاکستانی راستہ ہے

بذریعہ پاکستان، افغانستان میں تعینات مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے لئے لے جایا جانے والا کچھ سامان کچھ دنوں قبل لاپتہ ہو گیا تھا۔ پاکستانی حکام نے کہا ہے کہ چار کنٹینرز پر لدا ہوا یہ سامان پشاور شہرکے نواح میں واقع ایک فلورمِل کی پارکنگ سے ملا ہے۔ مقامی پولیس کے سربراہ صابر خان نے سامان برآمد کرنے کی تصدیق کرتے ہوئے یہ کنٹینرز صحافیوں کو بھی دکھائے۔

خبر رساں ادارے AFP نے بتایا ہے کہ اس سامان میں افغانستان میں تعینات امریکی فوجیوں کے لئے بھیجی جانے والی جیکٹیں، لیپ ٹاپ کمپیوٹر، سٹیشنری اور مشینوں کی کیبلز وغیرہ شامل ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ امریکی فوجیوں کو بھیجی جانے والی جیکٹوں پر فوجیوں اور یونٹوں کے نام درج تھے۔

پولیس نے بتایا ہے کہ جہاں سے یہ کنٹینر برآمد کئے گئے ہیں، اس فلور مِل کے چار ملازمیں کو گرفتار کر کے تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں۔ گرفتار شدگان میں مِل کا ایک گارڈ بھی بتایا گیا ہے۔

Flash-Galerie Extremisten zünden 27 Nato-Tanklaster an

نیٹو سپلائی کو پاکستان میں تباہ کرنا اب معمول کی بات بن گئی ہے

افغانستان میں موجود غیر ملکی افواج کو جو فوجی رسد بھیجی جاتی ہے اس کا ایک اہم حصہ پاکستانی راستے سے افغانستان پہنچتا ہے۔ پاکستان میں کراچی کی بندر گاہ پر اتارے جانے والا یہ سامان براستہ تورخم یا چمن کے راستے افغانستان پہنچایا جاتا ہے۔

ابھی حال ہی میں افغانستان میں تعینات حفاظتی امن فوج آئی سیف کی طرف سے پاکستانی سرحدوں کی خلاف ورزی کے بعد پاکستان نے نیٹو افواج کی فوجی رسد کے لئے پاکستانی راستوں کو بند کر دیا تھا، جو گیارہ دنوں کے بعد کھولا گیا تھا۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: ندیم گِل

DW.COM