1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستانی مسافر طیارہ تباہ، ڈیڑھ سو کے قریب لاشیں مل گئیں

پاکستانی دارالحکومت کے پہلو میں واقع مارگلہ پہاڑیوں کے اوپر فضا میں بدھ کی صبح ایک پرائیویٹ کمپنی ایئر بلیو کا مسافر ہوائی جہاز حادثے کا شکار ہو گیا۔ اس طیارے میں سوار تمام مسافر اور عملے کے سبھی ارکان ہلاک ہو گئے۔

default

مارگلہ کی پہاڑیوں میں بکھرے جہاز کے ملبےکو لگی آگ سے نکلتا دھواں

پاکستانی شہر کراچی سے اسلام آباد پہنچنے والا پرائیویٹ ہوائی کمپنی کا ہوائی جہاز حادثے کا شکار ہو کر تباہ ہو گیا۔ ہوائی جہاز کا ملبہ اسلام آباد سے ملحقہ مارگلہ پہاڑیوں پر گرا۔ وزارت داخلہ اور پولیس کے مطابق ہوائی جہاز میں مسافروں اور عملے کے ارکان سمیت کل 152 افراد سوار تھے۔ مسافروں کی تعداد 146 بتائی گئی ہے۔

Flugzeugabsturz in Islamabad Air Blue

تباہ ہونے والا مسافر طیارہ ایئر بلیو نامی فضائی کمپنی کا تھا

شروع میں یہ اطلاعات بھی تھیں کہ اس حادثے میں طیارے میں سوار پانچ یا چھ افراد اندہ بچ گئے ہیں تاہم پاکستانی وقت کے مطابق بدھ کی شام تک ملنے والی رپورٹوں میں امدادی ٹیموں کے ارکان کے موقع پر دئے گئے بیانات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ ایسے کوئی آثار نہیں ملے کہ اس حادثے میں طیارے میں سوار کوئی فرد زندہ بچا ہے۔

اسلام آباد میں مقامی حکومتی اہلکاروں کے حوالے سے خبر ایجنسیوں نے لکھا ہے کہ آخری خبریں آنے تک حادثے کی جگہ سے 149 ہلاک شدگان کی لاشیں تلاش کی جا چکی تھیں۔

Flugzeugabsturz Pakistan air blue

حادثےکی جگہ کے قریب ایمبولینس گاڑیاں اور ڈیوٹی پر موجود پولیس اہلکار

ایئر بس طرز کے اس ہوائی جہاز کو مقامی لوگوں نے حادثے سے قبل انتہائی کم بلندی پر پرواز کرتے دیکھا تھا، جو ان کے بقول خاصا غیر معمولی عمل تھا۔ لینڈنگ سے چند منٹ قبل ہوائی جہاز کے کاک پٹ میں موجود عملے کا ایئر پورٹ کے کنٹرول ٹاور سے رابطہ منقطع ہو گیا تھا۔ ابتدائی اندازوں کے مطابق اس المناک ہوائی حادثے کی ایک وجہ اسلام آباد کا خراب موسم بھی ہو سکتا ہے۔

حادثے کی اطلاع ملتے ہی امدادی ٹیمیں حادثے کے مقام پر پہنچ گئی تھیں۔ ملبے سے باقی ماندہ انسانی لاشیں ڈھونڈنے کا سلسلہ ابھی تک جاری ہے۔ گھنے جنگل اور گہری کھائیوں میں گرے ملبے سے انسانی لاشوں کو ڈھونڈنے میں مشکلات حائل ہیں۔

ابتدائی طور پر اس حادثے میں پانچ افراد کے زندہ بچ جانے کی بات پاکستانی وزیر داخلہ رحمان ملک نے کی تھی، تاہم بعد میں امدادی کارکنوں کے بیانات نے ایسے امکانات کی نفی کر دی تھی۔ یہ ہوائی جہاز ایئر بلیو نامی ایک نجی فضائی کمپنی کا تھا۔

رپورٹ: عابد حسین ⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: مقبول ملک

DW.COM