1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستانی فوج کو مقامی طالبان کا پیچھا کرنے کی ہدایت

پاکستانی فوج نے ابھی مالاکنڈ ڈویژن میں مقامی طالبان کے خلاف فوجی آپریشن مکمل نہیں کیا ہے کہ اب اُس کو وزیرستان کے قبائلی علاقوں میں سرگرم بیت اُللہ محسود کے گروہ کی سرکوبی کا حکم دیا گیا ہے۔

default

طالبان: افغان ہوں یا پاکستانی، حلیہ اور ہیت ایک جیسی،

حکومت پاکستان نے سوات آپریشن شروع کئے جانے کے تقریباً ڈیڑھ ماہ بعد اب وزیرستان ایجنسی میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے امیر بیت اللہ محسود اور انکے ساتھیوں کے خلاف حتمی فوجی کاروائی شروع کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس سلسلے میں صوبہ سرحد کے گورنر اویس احمد خان غنی نے اتوار کی شب دیر سے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔ گورنر سرحد نے کہا کہ حکومت نے دھشت گردوں کے مرکز پر حتمی اور کاری ضرب لگانے کا عزم کیا ہے۔ ادھر جنوبی وزیرستان، بنوں، مالا کنڈ اور باجوڑ میں غیر ملکیوں سمیت 84 جنگجوؤں کی ہلاکت کی خبر ہے۔ ذرائع کے مطابق حکومت نے بیت اللہ محسود کے خلاف فیصلہ کن آپریشن کے اعلان سے ایک نئی مہم کا آغاز کیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق بیت اللہ محسود اور اس کے ساتھیوں کے خلاف 19 نکاتی چارج شیٹ جاری کر دی گئی ہے اور فوجی آپریشن انہیں بنیادوں پر شروع کیا گیا ہے۔ گورنر سرحد نے اسلام آباد کے فرنٹئر ہاؤس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مساجد میں نمازیوں کو ہلاک کرنے اور دیگر درندہ صفت کاروائیوں کے پیچھے دراصل بیت اللہ محسود کے ساتھی دھشت گردوں کا ہاتھ ہے۔ محسود قبائل سے دھشت گردی کی تربیت گاہوں کو بند کرنے کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔

پاکستانی صوبے شمال مغربی سرحدی صوبے میں مالا کنڈ ڈویژن میں آپریشن راہ راست کے بعد اب حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ پاکستانی طالبان کے لیڈر بیت اُللہ محسود کے خلاف بھرپور انداز میں فوجی کارروائی کی جائے۔ یہ کارروائی اُس وقت تک جاری رکھی جائے گی جب تک مقامی طالبان کے نیٹ ورک کا خاتمہ نہیں ہو جاتا اور حکومت کے اختیار کو چیلنج کرنے والے طالبان قبائلی سرداروں کی سرکوبی کا عمل مکمل نہیں ہو جاتا

Audios and videos on the topic