1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاکستانی صدر کی طرف سے بھارت کو مذاکرات کی دعوت

پاکستانی صدر ممنون حسین نے کہا ہے کہ پاکستان بھارت کے ساتھ کشمیر سمیت تمام امور پر بات چیت کے لیے تیار ہے۔ یہ بات انہوں نے یوم پاکستان کی خصوصی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق پاکستانی دارالحکومت اسلام آباد میں ہونے والی اس سالانہ پریڈ کی ایک خاص بات یہ بھی رہی کہ اس میں چینی فوجی دستے بھی شامل ہوئے جو پاکستان اور چین کے درمیان بڑھتے ہوئے دوستانہ تعلقات کی عکاسی کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ سعودی عرب اور ترکی کے فوجی دستوں نے بھی یوم پاکستان کی اس پریڈ میں شرکت کی۔

اسلام آباد کے ایک اسٹیڈیم میں حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے پاکستانی صدر ممنون حسین کا کہنا تھا کہ چینی فوج نے اس سے قبل کسی دوسرے ملک میں کبھی اس طرح کے ایونٹ میں شرکت نہیں کی۔ ان کا یہ خطاب ٹیلی وژن پر براہ راست نشر کیا گیا۔

یوم پاکستان کے موقع پر منعقدہ اس خصوصی فوجی پریڈ میں جوہری ہتھیار لے جانے والے میزائلوں، ٹینکوں، جیٹ لڑاکا طیاروں اور دیگر جدید ہتھیاروں کی نمائش بھی کی گئی۔

پاکستانی صدر نے امید ظاہر کی کہ ملک میں جاری فوجی آپریشن رد الفساد کے ذریعے دہشت گردوں کا مکمل طور پر خاتمہ کر دیا جائے گا۔ اس حوالے سے انہوں نے پاکستانی فوج کی کوششوں اور  قربانیوں کا سراہا۔

اپنے خطاب میں ممنون حسین نے ہماسیہ ملک بھارت پر الزام عائد کیا کہ وہ متنازعہ خطے کشمیر میں جنگ بندی کی خلاف ورزی کر کے علاقائی امن کو خطرے میں ڈال رہا ہے۔ کشمیر کا خطہ پاکستان اور بھارت کے درمیان تقسیم ہے۔ دونوں ہی ممالک اس پورے خطے پر اپنا حق جتاتے ہیں۔ مسلم اکثریت رکھنے والے بھارتی زیرانتظام کشمیر میں گزشتہ برس سے بھارت مخالف احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ علیحدگی پسندوں کی طرف سے 1990ء کی دہائی سے کشمیر سے علیحدگی یا اس علاقے کی پاکستان کے ساتھ شمولیت کے لیے مسلح کوششیں جاری ہیں۔ اس دوران مسلح جھڑپوں اور بھارتی سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں کے نتیجے میں وہاں 70 ہزار سے زائد ہلاکتیں ہو چکی ہیں۔ ہلاک ہونے والوں کی اکثریت عام کشمیریوں کی ہے۔