1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاپائے روم کا نازی دور کے سابق اذیتی کیمپ آؤشوٹس کا دورہ

مسیحیوں کے روحانی پیشوا پاپائے روم فرانسس نے آج جمعے کو نازی دور کے سابقہ اذیتی کیمپ آؤشوٹس کا دورہ بوجھل دل اور صدمے کے اظہار کے ساتھ کیا۔

پوپ خود پیدل چل کر آؤشوٹس کے اس بدنام زمانہ کیمپ میں داخل ہوئے جس کے دروازے پر طنز کے طور پر یہ الفاظ درج ہیں،’’کام آزاد کر دیتا ہے‘‘۔

جرمن نازی دور میں آمر حکمران آڈولف ہٹلر کی فورسز نے آؤشوٹس کے اس بدنام زمانہ کیمپ میں ایک ملین سے زیادہ انسانوں کو، جن میں اکثریت یہودیوں کی تھی خوفناک طریقے کی اذیت رسانی کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔ پوپ فرانسس اس اذیتی کیمپ کا دورہ کرنے والے تیسرے مسلسل روم کے اسقُف ہیں۔

Polen Weltjugendtag 2016 Papst Franziskus besucht Auschwitz

اذیتی کیمپ آؤشوٹس کے دورے پر پوپ سخت غمزدہ

پوپ فرانسس نے آؤشوٹس کے اذیت رسانی کیمپ پہنچ کر 15 منٹ تک خاموشی سے نازی دور کی اُن بہیمانہ زیادیتوں کا شکار بننے والوں کے لیے دُعا کی اور اُنہیں نظرانہ عقیدت پیش کیا اور بعد ازاں اس کیمپ میں بچ جانے والے قیدیوں میں سے چند ایک کے ساتھ اپنے خلوص و محبت کا اظہار کرتے ہوئے اُن سے ہاتھ ملایا اور اُن کے گالوں کو بوسہ دیا۔

پوپ نے ایک بڑی سفید موم بتی روشن کر کے اُسے ’ اُس موت کی دیوار‘ پر نصب کیا جس پر ہزاروں لاکھوں افراد کو پھانسی دی جاتی تھی۔

اس مقام پر ایک تاریک زیر زمین جیل سیل واقع ہے جہاں کبھی معروف پولستانی کیتھولک راہب ماکسی میلین کولبے نے ایک اور شخص کی جان بچانے کے لیے اپنی زندگی کا نذرانہ پیش کیا تھا۔ پوپ فرانسس نے اس سیل میں جا کر بھی دُعا کی۔

اس پولستانی پادری نے ایک خاندان کے سربراہ کو بچانے کے لیے اُس کی جگہ موت کی سزا کے لیے رضاکارانہ طور پر خود کو پیش کر دیا تھا۔ برکیناؤ کے اس سابقہ اذیتی کیمپ میں پوپ اُن لوگوں سے بھی ملیں گے، جنہوں نے نازی دورِ حکومت میں یہودیوں کو قتل ہونے سے بچایا تھا۔

Polen Weltjugendtag 2016 Papst Franziskus besucht Auschwitz

پوپ ’موت کی ذیوار کے سامنے‘ دعا کرتے ہوئے

ارجنٹائن سے تعلق رکھنے والے پوپ فرانسس آؤشوٹس کے سابقہ کیمپ کا دورہ کرنے والے ویٹیکن کے وہ پہلے اسقُف ہیں، جنہوں نے بذات خود یورپ کی سر زمین پر دوسری عالمی جنگ کے مظالم نہیں سہے ہیں۔

کل جمعرات کو رومن کیتھولک کلیسا کے سربراہ نے پولینڈ کے شہر کراکوف میں ورلڈ یُوتھ کانگریس کے لیے دنیا بھر سے گئے ہوئے اندازاً چھ لاکھ نوجوانوں سے خطاب کرتے ہوئے سوال کیا تھا، ’’کیا تم لوگوں میں اتنی طاقت ہے کہ تم اُن لوگوں کا مقابلہ کرو، جو نہیں چاہتے کہ یہ دنیا بدلے؟‘‘

پولینڈ میں اپنے خطاب ميں پوپ فرانسس نے مہاجرين کے ليے امداد بڑھانے اور فراخ دلی کے مظاہرہ کرنے پر بھی زور دیا تھا۔

DW.COM