1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پاپائے روم کا بیان عالمی سازش ہے، سُنی اتحاد کونسل

پاکستان میں سُنی مذہبی جماعتوں کے ایک اتحاد نے کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ بینیڈکٹ شانزدہم کی جانب سے توہین رسالت سے متعلق قانون کو ختم کرنے کے مطالبے کو عالمی سازش کا حصہ قرار دیا ہے۔

default

مسلم لیگ ن سے تعلق رکھنے والے سُنی اتحاد کونسل کے سربراہ صاحبزادہ فضل کریم کے مطابق پوپ بینیڈکٹ کا بیان دنیا کے مذاہب کو ایک دوسرے کے آمنے سامنے کھڑا کرنے کی کوشش ہے۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے نے پاکستانی ذرائع ابلاغ کے حوالے سے بتایا کہ صاحبزادہ فضل کریم نے پوپ بینیڈکٹ کے بیان کو اقوام متحدہ کے چارٹر برائے امن کی خلاف ورزی قرار دیا۔ صاحبزادہ فضل کریم، بریلوی مسلک کی نمائندہ آٹھ جماعتوں کی نمائندگی کرتے ہیں۔

Pakistan Proteste gegen Musharraf

مبصرین کے مطابق پاکستان کی نوجوان نسل کے رویوں میں برداشت کی کمی دیکھی جارہی ہے

ان کے علاوہ جماعت اسلامی کے رہنما لیاقت بلوچ بھی پوپ بینیڈکٹ کے بیان پر اپنے غم و غصے کا اظہار کرچکے ہیں۔ بلوچ کے بقول پوپ کا یہ بیان تہذیبوں کے ٹکراؤ کا سبب بن سکتا ہے۔

یاد رہے کہ پوپ بینیڈکٹ نے ویٹی کن سٹی میں سال کے آغاز پر غیر ملکی سفیروں سے رسمی ملاقات میں کہا کہ پاکستان میں توہین رسالت سے متعلق قانون بے انصافی اور تشدد پر مبنی واقعات کا سبب بن رہا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کی مذہبی سیاسی جماعتوں نے پنجاب کے سابق گورنر سلمان تاثیر کے قتل کی مذمت نہیں کی۔ اتوار کراچی میں ملک کی بڑی مذہبی جماعتوں کے تحت منعقدہ ریلی میں قاتل ممتاز قادری کے حق میں نعرے لگائے گئے۔

Pakistan Mumtaz Qadri Mord Gouverneur Salman Taseer

گورنر کی سلامتی پر مامور محافظ، جس نے ان پر بے دریغ گولیاں برسائیں

اس کے برعکس پاکستان کی اعتدال پسند قوتیں سلمان تاثیر کے قتل کو ملک میں رواداری اور برداشت پر کاری ضرب قرار دیتے ہوئے اس کے فوری سدباب کی ضرورت اجاگر کر رہی ہیں۔ تجزیہ کاروں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ قتل کی اس واردات کے بعد اعتدال پسند قوتوں کی آواز مزید دب سکتی ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے سلمان تاثیر کے ایک باڈی گارڈ نے انہیں فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا، جو عدالت میں اس بات کا اعتراف کر چکا ہے۔ تجزیہ کار حسن عسکری کے بقول 80ء کی دہائی سے ملک میں جو شدت پسندی کی فضاء ہے، وہ آئندہ کئی عشروں تک غالب رہے گی۔

رپورٹ شادی خان سیف

ادارت ندیم گِل

DW.COM