1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

پابندیاں تہران کو تنہا کر دیں گی، اوباما

امریکی صدر باراک اوباما نے منگل کی شام اپنے ایک بیان میں تہران حکومت کو خبردار کیا کہ ایٹمی ہتھیاریوں کے حصول کی کوشش ایران کو دنیا بھر میں تنہا کر دے گی۔

default

اوباما نے کہا کہ ایران کے لئے مذاکرات کا راستہ اب بھی کھلا ہے

اوباما نے کہا کہ ایران کے خلاف سخت ترین پابندیوں کے حوالے سے عالمی طاقتیں تیز اور صاف طریقے سے آگے بڑھ رہی ہیں۔

امریکی صدر نے وائٹ ہاؤس میں منگل کے روز ایک بریفنگ میں کہا کہ چھ عالمی طاقتیں تہران حکومت کے خلاف سخت ترین پابندیوں کے سلسلے میں میں آگے بڑھ رہی ہیں۔ انہوں نے اشارتا یہ بھی کہا کہ امریکی انتظامیہ اس سلسلے میں روس کو بھی آمادہ کرنے کی سر توڑ کوشش میں مصروف ہے۔

Iran - Atomkraftwerk Buschehr

ایران اپنے جوہری پروگرام کو پرامن قرار دیتا ہے

’’ہم اب اگلے کچھ ہفتوں میں ایران کے خلاف سخت ترین اور مؤثر پابندیوں کے سلسلے میں جو کچھ کرنے والے ہیں، اس سے تہران جان جائے گا کہ وہ عالمی برادری میں کس قدر تنہا ہو گیا ہے۔‘‘

امریکی صدر باراک اوباما نے یہ بھی کہا کہ جب تک ایران کے ساتھ مذاکرات کا دروازہ کھلا ہے، اس وقت تک بات چیت کے ذریعے اس مسئلے کے حل کی کوشش بھی کی جاتی رہے گی۔ تاہم اوباما کا کہنا تھا کہ جوہری پروگرام کے حوالے سے تہران حکومت کی موجودہ سوچ ناقابل قبول ہے۔

’’ہم کئی راستوں کا انتخاب کریں گے، جس کا ذکر کئی ممالک کر چکے ہیں، جس سے تہران جان سکے کہ اس کا موجودہ نقطہء نظر قبول نہیں کیا جا سکتا۔‘‘

Anreicherungsanlage für Uran im Iran

ایران نے 20 فیصد تک افزودہ یورینیم کی تیاری شروع کر دی ہے

جرمن وزیر خارجہ گیڈوویسٹر ویلے نے بھی اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ایران بامقصد مذاکرات پر آمادہ نہ ہوا تو اسے مزید سخت پابندیوں کا سامنا کرنا ہوگا۔

’’اگر ایران مذاکرات کی دعوت مسلسل ٹھکراتا رہا، تو اقوام متحدہ کی سطح پر بات چیت ناگزیر ہو جائے گی اور تب نئے اقدامات پر بات کرنا پڑے گی۔ ان نئے اقدامات میں پابندیوں کا دائرہ وسیع کرنا بھی شامل ہے۔‘‘

دوسری جانب ایران نے منگل کے روز اعلان کیا ہے کہ اس نے اپنے ہاں بیس فیصد تک اعلیٰ افزودہ یورینیم کی تیاری شروع کر دی ہے۔ یہ اعلان ایرانی جوہری توانائی ادارے کے سربراہ علی اکبر صالحی نے کیا۔ صالحی کے بقول تیار کی جانے والی یورینیم میڈیکل کے شعبے میں استعمال کی جائے گی۔ مبصرین کا خیال ہے کہ اگر ایران یورینیم کو بیس فیصد تک افزودہ کرنے میں کامیابی حاصل کر لیتا ہے تو اسے اس یورینیم کو 90 فیصد تک افزودہ کرنے میں کوئی مشکل پیش نہیں آئے گی۔

Flash-Galerie Deutschland 100 Tage schwarz-gelb Guido Westerwelle zu Afghanistan

جرمن وزیرخارجہ گیڈوویسٹرویلے بے بھی ایران پر پابندیوں کی حمایت کی ہے

واضح رہے کہ اس وقت ایران کے پاس تین سے چار فیصد تک افزودہ یورینیم موجود ہے۔ جوہری ہتھیاروں کی تیاری کے لئے نوے سے پچانوے فیصد تک افزودہ یورینیم درکار ہوتی ہے۔

چار ماہ قبل اقوام متحدہ کی بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے ایران اور عالمی طاقتوں کے سامنے ایک منصوبہ پیش کیا تھا، جس کے تحت ایران کم افزودہ یورینیم کو روس یا فرانس برآمد کر دے اور پھر اسے ایک برس بعد طبی شعبے میں قابل استعمال حد تک افزودہ یورینیم لوٹا دی جائے۔ ایران کو اس مجوزہ منصوبے پر ٹائم لائن سمیت کئی طرح کے اعتراضات تھے، جس کے بعد یہ مذاکرات بغیر کسی معاہدے کے تعطل کا شکار ہوگئے تھے۔

جمعے کے روز ایرانی وزیرخارجہ منوچہر متقی نے ایک جرمن اخبار کو دئے گئے اپنے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ ایران جوہری پروگرام کے حوالے سے عالمی طاقتوں سے کسی اہم معاہدے کے انتہائی قریب ہے۔ اس بیان کو امریکہ اور جرمنی نے محض الفاظ کا کھیل قرار دیا تھا۔ اتوار کے روز ایرانی صدر محمود احمدی نژاد نے ملکی جوہری توانائی ادارے کو ہدایات دی تھیں کہ اب وہ ملک ہی میں 20 فیصد افزودہ یورینیم کی تیاری شروع کر دے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : امجد علی

DW.COM