1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

ٹیم میں کھیلنا ذہنی اذیت سے کم نہیں، مصباح الحق

پاکستانی کرکٹ ٹیم میں کھیلنا کبھی ایک اعزاز کی بات ہوا کرتی تھی۔ اب لیکن کپتان مصباح الحق نے کہا ہے کہ موجودہ حالات میں قومی ٹیم کی نمائندگی کرنا کسی ذہنی اذیت سے کم نہیں۔

default

ماحول اس قدر خراب ہو گیا ہے کہ کارکردگی پر منفی اثر پڑ رہا ہے ، مصباح

پاکستانی کرکٹ ٹیم کےکپتان مصباح الحق نے کہا ہے کہ گزشتہ کئی برسوں سے پاکستانی کرکٹ کو مسلسل اسکینڈلز اور تنازعات کا سامنا ہے۔ ان کے بقول ماحول اس قدر خراب ہو گیا ہے کہ کارکردگی پر منفی اثر پڑ رہا ہے۔ ’’کارکردگی مستقل متاثر ہو رہی ہے، جس سے ذہنی دباؤ میں شدید اضافہ ہو گیا ہے‘‘۔ نجی ٹیلی وژن جیوکو انٹرویو دیتے ہوئے مصباح الحق کا کہنا تھا، ’’کرکٹ کھیلنا اب ذہنی اذیت سے کم نہیں‘‘۔

گزشتہ برس سلمان بٹ کے میچ فکسنگ میں ملوث ہونے کے بعد مصباح الحق کو ٹیسٹ ٹیم کا کپتان مقرر کیا گیا تھا۔ اس وقت ٹیم پر بدعنوانی کے الزامات تھے اور کھلاڑیوں کے مابین تال میل کا فقدان کسی سے بھی ڈھکا چھپا نہیں تھا۔ مصباح الحق کا کہنا ہے کہ موجودہ صورتحال کسی بھی طرح سے پاکستانی کرکٹ کے لیے سود مند نہیں ہے۔’’ہم پر لوگ ملک میں اور بیرون ملک آوازے کستے ہیں، طنز کرتے ہیں‘‘۔

Misbah-ul-Haq Pakistan Cricket New test captain

تمام مسائل کے باوجود ذہنی طورپر پاکستان کی جانب سے کھیلنے پر تیار ہوں، مصباح

شاہد آفریدی کے ایک روزہ میچوں کی کپتانی سے مستعفی ہونے کے بعد سے یہ ذمہ داری بھی مصباح الحق ہی نبھا رہے ہیں۔ 37 سالہ کرکٹر کا کہنا تھا کہ اس وقت پاکستانی ٹیم کے ارکان کو متحد کرنا بہت ضروری ہے۔ ان کی نفسیاتی تربیت بھی ہونی چاہیے تاکہ ٹیم کے ممبران کی آپس میں بات چیت اور میل جول بڑھ جائے۔ ان کے بقول کھلاڑیوں کی اگرکوئی تنظیم قائم کی جائے تو وہ اس سلسلے میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔ وہ کھلاڑیوں کو بین الاقوامی کرکٹ کے لیے تیار کرنے کے علاوہ انہیں اُن کے معاہدے سمجھانے میں بھی تعاون کر سکتی ہے۔ مصباح کے بقول ایک مرتبہ جب معاہدے پر دستخط ہو جاتے ہیں تو پھر شکایت کرنے کا کوئی فائدہ نہیں رہتا۔ ’’ضروری ہےکہ ایسی صورتحال میں کھلاڑی پاکستان کرکٹ بورڈ سے بھی رابطہ کیا کریں‘‘۔

مصباح الحق کے بقول جب تک وہ فٹ ہیں، کرکٹ کھیلتے رہیں گے۔’’میں تمام مسائل کے باوجود ذہنی طورپر پاکستان کی جانب سے کھیلنے پر تیار ہوں‘‘۔ مصباح کے لیے ان کی عمر ان کے لیےکوئی رکاوٹ نہیں ہے۔ ان کے خیال میں جب کرکٹر 30 سال کا ہو جاتا ہے تو تجربہ اس کے کھیل میں نکھار پیدا کر دیتا ہے، ’’خوش قسمتی سے میرے ساتھ ایسا ہی ہوا ہے‘‘۔

رپورٹ : عدنان اسحاق

ادارت: امجد علی

DW.COM