1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ٹیسٹ ٹیوب بچوں کی پیدائش جائز، پاکستانی شرعی عدالت کا فیصلہ

پاکستان کی وفاقی شرعی عدالت کے ایک فیصلے کے مطابق ٹیسٹ ٹیوب طریقہء کار سے بچوں کی پیدائش اخلاقی طور پر جائز اور مذہبی ضابطوں کے عین مطابق ہے۔ اس فیصلے کو بے اولاد پاکستانی جوڑوں کے لیے امید کی کرن قرار دیا جا رہا ہے۔

پاکستانی دارالحکومت اسلام آباد سے بدھ بائیس فروری کو ملنے والی نیوز ایجنسی پی ٹی آئی کی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ ٹیسٹ  ٹیوب طریقہء کار سے بچوں کی پیدائش اگرچہ ایک پیچیدہ طبی عمل ہے لیکن یہ بہت سے بے اولاد پاکستانی جوڑوں کے لیے اس لیے بھی ایک اچھی خبر ہے کہ اب انہیں اس طریقہء کار پر عمل اور اپنی اولاد کی خواہش کو پورا کرتے ہوئے اخلاقی اور مذہبی حوالوں سے بھی اطمینان ہو گا کہ انہوں نے کوئی ایسا کام نہیں کیا جو جائز نہ ہو۔

وفاقی شرعی عدالت کے منگل اکیس فروری کو سنائے گئے ایک فیصلے کے مطابق، ’’اگر بچے کی پیدائش کی وجہ بننے والا سپرم اس کے قانونی والد ہی کا ہو اور بیضہ اس کی والدہ کا، جو متعلقہ مرد کی بیوی ہو، تو ایسی صورت میں طبی طریقہء کار سے مصنوعی حمل ٹھہرانے کے بعد اگر ایمبریو دوبارہ اس بچے کی حقیقی والدہ ہی کے رحم میں رکھا جائے، تو یہ طبی عمل مذہبی حوالے سے بھی قانون کے مطابق اور جائز ہو گا۔‘‘

Deutschland Medizin künstliche Befruchtung IVF (picture alliance/dpa)

ٹیسٹ ٹیوب بچوں کی پیدائش کے لیے مصنوعی حمل کی خاطر آئی وی ایف کا طریقہء کار اپنایا جاتا ہے

خبر رساں ادارے پی ٹی آئی نے پاکستانی میڈیا میں شائع ہونے والی مرد اور عورت کے تولیدی خلیات کے مصنوعی ذرائع سے ملاپ سے متعلق وفاقی شرعی عدالت کے 22 صفحات پر مشتمل اس فیصلے کی تفصیلات میں لکھا ہے کہ عدالت کے مطابق اگر متعلقہ مرد اور عورت آپس میں شادی شدہ ہوں اور مصنوعی حمل یا IVF نامی طبی عمل کے لیے انہی کے تولیدی خلیات استعمال کیے جائیں تو یہ عمل نہ تو غیر قانونی ہو گا اور نہ ہی قرآن و سنت کے احکامات کے منافی۔

عدالت نے اپنے فیصلے میں لکھا ہے، ’’اس عمل کے جائز ہونے کی وجہ یہ ہے کہ اگر متعلقہ مرد اور خاتون کو کسی طبی مدد کی ضرورت نہ پڑے تو بھی وہ اسی طرح کسی بچے کے والدین  بن سکتے ہیں، جیسے کہ ٹیسٹ ٹیوب طریقہء کار کی مدد سے پیدا ہونے والے بچے کے حقیقی والدین کے طور پر۔ ’’ایسی صورت میں پیدا ہونے والا بچہ بھی ان والدین کی قانونی اور مذہبی طور پر جائز اولاد اور وارث ہو گا۔‘‘

ساتھ ہی وفاقی شرعی عدالت نے یہ بھی کہا کہ اگر ٹیسٹ ٹیوب بے بی کی پیدائش کے لیے بیضہ اور سپرم میں سے دونوں یا کوئی ایک بھی متعلقہ جوڑے کے علاوہ کسی دوسرے مرد یا عورت کا ہو، تو ایسی صورت میں کسی ٹیسٹ ٹیوب بچے کی پیدائش اخلاقی طور پر ’غلط، ناجائز اور غیر اسلامی‘ ہو گی۔

اس سے قبل 2013ء میں پاکستان کی اسلامی نظریاتی کونسل نے بھی کہا تھا کہ اسلام میں ٹیسٹ ٹیوب بچوں کی پیدائش کی اجازت تو ہے لیکن چند مخصوص شرائط پوری کرنے کے بعد۔

Geburten in Pakistan (DW/D. Baber)

پاکستان میں قریب دس فیصد جوڑے بے اولاد ہوتے ہیں جن میں سے نوے فیصد کی طبی طور پر مدد کی جا سکتی ہے

پی ٹی آئی نے پاکستانی طبی ماہرین کے حوالے سے لکھا ہے کہ پاکستان میں شادی شدہ جوڑوں میں بے اولاد رہنے کی شرح 10 فیصد تک ہے لیکن ان میں سے بھی 90 فیصد واقعات میں طبی مدد لینے سے ایسے جوڑے بھی والدین بن سکتے ہیں۔

ڈاکٹر مظہر احمد نامی ایک پاکستانی ڈاکٹر کے مطابق ہر دس بے اولاد پاکستانی جوڑوں میں سے بھی صرف ایک کیس ایسا ہوتا ہے، جس میں طبی ماہرین بھی متعلقہ شادی شدہ جوڑے کی والدین بننے میں کوئی مدد نہیں کر سکتے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic