1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ٹرمپ کی تنقید ’مایوس کن‘ ہے، پاکستان

پاکستان نے آج بدھ کے دن امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے گزشتہ روز کی جانے والی تنقید کو ’مایوس کن‘ قرار دیا ہے۔ اسلام آباد حکام نے دہشت گرد تنظیموں سے تعاون کے امریکی الزامات کو بھی مسترد کیا۔

پاکستانی وزیر خارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ امریکی فوج کے افغان جنگ جیتنے میں ناکامیوں کے تناظر میں پاکستان کو قربانی کا بکرا ہرگز نہیں بنایا جا سکتا اور یہ حقیقت سے انحراف ہو گا۔ آصف کے مطابق پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ میں شمولیت اور کردار کی مثال نہیں دی جا سکتی۔

پاکستان نے بڑی قربانیاں دی ہیں: ٹرمپ کی تنقید پر چین کا جواب

ٹرمپ کی افغان پالیسی پاکستان میں زیرِ بحث

پاکستان کو دہشت گردوں کو پناہ دینے کی قیمت چکانا ہو گی، ٹرمپ

خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ جب سے پاکستان امریکا کی شروع کی گئی ’دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ‘ میں شامل ہوا ہے، تب سے اِسے شدید جانی و مالی نقصانات کا سامنا ہے۔ پاکستانی وزیر خارجہ نے سن 2001 میں شروع ہونے والی اس جنگ میں پاکستان کے فوجیوں اور سویلین کی ہلاکتوں کی تعداد تقریباً ستر ہزار بتائی ہے۔

خواجہ محمد آصف نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ یہ امریکا کی خام خیالی ہے کہ وہ افغانستان میں عسکریت پسندوں کے خلاف پاکستان کو ڈرا دھمکا کر یا اسلام آباد حکومت کو منفی کر کے جیت سکتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستانی کردار اور اتحادی ہونے کی حوصلہ افزائی نہیں کی ہے جو ایک مناسب قدم نہیں قرار دیا جا سکتا۔

Pakistan PeschawarBombenanschlag auf Markt mit 125 Toten (Getty Images/AFP/A Majeed)

پاکستانی وزیر خارجہ کے مطابق دہشت گردی کے خلاف جاری امریکی جنگ میں پاکستان کو شدید جانی و مالی نقصان کا سامنا رہا ہے

یہ امر واقع ہے کہ پاکستان کو افغان تنازعے کی وجہ سے اندرونِ ملک دہشت گردی کا سامنا رہا ہے۔ خودکش حملوں، ٹارگٹ کِلِنگز اور دوسرے حملوں سے ملکی نظام کو کمزور کرنے کی کوششیں جاری رکھی گئی ہیں اور اس میں ہزاروں انسان ہلاک ہو چکے ہیں، جن میں خواتین، بچے، عام شہری شامل ہیں۔

دوسری جانب اس صورت حال کے ناقدین کا الزام ہے کہ افغانستان میں جاری طالبان کی مسلح جنگی کارروائیوں میں شامل کئی مرکزی کرداروں کی پرورش بھی پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے کرتے رہے ہیں۔ تاہم ناقدین کے پاس اس دلیل کے حق میں ٹھوس ثبوت موجود نہیں ہیں اور تمام تر الزامات منحرف ہو جانے والے طالبان لیڈروں کے بیانات پر مبنی ہیں۔

DW.COM