1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

يورو زون کے بحران کے حل کی چند تجاويز

يورپ رياستی قرضوں اور مالی مسائل کے بحران سے نکلنے کے ليے سرتوڑ کوشش کر رہا ہے۔ اس کے ليے تجاويز اور سفارشات کی کمی نہيں ہے۔ ليکن کيا يہ واقعی ان مشکلات سے نکالنے کے لیے کارگر ہوں گی؟

يونان ميں بچت کے سخت حکومتی اعلانات پر احتجاج

يونان ميں بچت کے سخت حکومتی اعلانات پر احتجاج

يورو کرنسی زون کے ممالک ميں رياستی قرضوں اور نجی مالی بحران کا چولی دامن کا ساتھ ہے۔ اس سب معاملے کا آغاز يورپ کے جنوبی کنارے اور آئر لينڈ ميں بينکوں سے بہت زيادہ ليے جانے والے قرضوں کے ساتھ ہوا تھا۔ ماہر اقتصاديات اور جرمن حکومت کے اقتصادی مشير کليمينس فيوسٹ نے کہا، ’بينکوں نے بہت فراخدلی سے اور کسی احتياط کے بغير قرضے ديے۔ اس کے علاوہ بينکوں کا اپنا سرمايہ بہت تھوڑا تھا‘۔

اس ليے فيوسٹ کا کہنا ہے کہ مالياتی نظام ميں بنيادی نوعيت کی اصلاحات کو مرکزی اہميت دی جانا چاہيے۔ اس سلسلے ميں سوئٹزرلينڈ کے عالمی توازن ادائيگی کے بينک ’بازل تين‘ نے اصلاحات کا ايک پيکج تيار کيا ہے، جس ميں بينکوں کے اپنے سرمايے ميں اضافے کو سب سے زيادہ اہميت دی گئی ہے۔

يورو زون کے ملک اٹلی کے نئے وزير اعظم مونٹی

يورو زون کے ملک اٹلی کے نئے وزير اعظم مونٹی

رياستی بونڈز بہت پر خطر سرمايہ کاری سمجھے جاتے ہيں۔ بينکوں کو ان کی خريد کے ليے کسی قسم کی ضمانت دينے کی ضرورت نہيں ہوتی۔ اس وجہ سے بھی رياستی قرضوں ميں بہت زيادہ اضافہ ہوتا رہا۔ متاثرہ ممالک کو ان قرضوں کی ادائيگی کے ليے برآمدات ميں اضافہ کرنا اور توازن ادائيگی ميں منافع کمانا ہوتا ہے۔ اس کے ليے مقروض ممالک کو تجارتی مقابلے کی صلاحيت ميں اضافے کی ضرورت ہے۔ ان ملکوں ميں اقتصادی ڈھانچے کو مضبوط بنانا ہو گا۔

يونانی حکومت کے بچت کے سخت اقدامات پر يونانی پريس کے تبصرے اور خبريں

يونانی حکومت کے بچت کے سخت اقدامات پر يونانی پريس کے تبصرے اور خبريں

ماہراقتصاديات فيوسٹ کے مطابق رياستی قرضوں سے بچنے يا انہيں بہت کم رکھنے ہی سے ان مشکلات سے بچا جا سکتا ہے، جن ميں آج يورپ، امريکہ اور دنيا کے دوسرے علاقوں کے ممالک بھی گھرے ہوئے ہيں۔ ان کا کہنا ہے کہ قرضوں کو ايک حد سے نہ بڑھنے دينے کو ايک ضابطے کے طورپرملکی آئين ميں درج ہونا چاہيے۔ ليکن اسے عوام اور سياست کی حقيقی حمايت حاصل ہونا بھی ضروری ہے۔ اس کے علاوہ اگر جنوبی يورپی ممالک نے اسے جرمنی سے درآمدہ تجويز سمجھا تو وہ اسے دل سے قبول نہيں کريں گے۔

رپورٹ: جانگ دان ہونگ / شہاب احمد صديقی

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM