1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

يورو زون کا بحران ، جرمنی اور فرانس کی تجاويز

کل جرمن چانسلر ميرکل اور فرانسيسی صدرسارکوزی نے يورو زون کے مسائل اور قرضوں کے بحران پر صلاح مشوروں کے ليے پيرس ميں ملاقات کی، جس ميں دونوں سربراہوں نے کچھ باتيں طے کيں۔

سارکوزی اور آنگيلا ميرکل پيرس ميں، 16 اگست

سارکوزی اور آنگيلا ميرکل پيرس ميں، 16 اگست

اگرچہ کل پيرس ميں فرانس اور جرمنی کے سربراہان نے جو کچھ طے کيا اسے فی الحال صرف تجاويز کی حيثيت حاصل ہے ليکن پھر بھی ان کا ايک مقصد يورپ کی حساس مالی منڈيوں ميں سکون لانا ہے۔ انگيلا ميرکل اور نکولا سارکوزی نے کل پيرس ميں مشترکہ تصورات کا ايک پورا پلندہ پيش کيا۔

بکھرتا ہوا يورو اور يورپی يونين کا جھنڈا

بکھرتا ہوا يورو اور يورپی يونين کا جھنڈا

اس ميں يورو زون کے17 ممالک کی ايک مشترکہ اقتصادی حکومت اہم ترين نکتہ ہے۔ خصوصاً فرانسيسی صدر سارکوزی ايک طويل عرصے سے اس تصور کو عملی شکل دينے پر اصرار کر رہے ہيں۔ انہوں نے کہا: ’’مشترکہ اقتصادی کونسل ڈھائی سال کی مدت کے ليے ايک مستحکم صدر منتخب کرے گی۔ چانسلر ميرکل نے تجويز پيش کی ہے کہ يہ عہدہ يورپی کونسل کے صدر ہيرمن وان رومپوئے کو سونپا جائے۔‘‘

جرمن چانسلر ميرکل فرانسيسی صدر سارکوزی سے اپنی يہ بات منوانے ميں کامياب رہيں کہ يورو زون کے تمام ممالک کو قرضوں ميں مسلسل اضافے کو روکنے کا پابند بنايا جائے: ’’ہم يورو زون کے دوسرے ممالک کو بھی يہ تجويز پيش کرتے ہيں کہ ہم سب اپنے آئين ميں اس نکتے کو شامل کر ليں۔ اس طرح اکثريت کی حمايت ہونے يا نہ ہونے سے قطع نظر يہ ضابطہ اعلٰی ترين اصول کی حيثيت اختيار کر لے گا۔‘‘

يورو، مالی منڈی اور قرضوں کا بحران، ايک علامتی تصوير

يورو، مالی منڈی اور قرضوں کا بحران، ايک علامتی تصوير

مير کل اور سارکوزی شیئرز اور اسٹاک ايکسچينج کے کاروبار ميں منتقل ہونے والی رقوم پر ٹيکس کی تجويز کو بھی يورو زون کے دوسرے رکن ممالک سے منوانا چاہتے ہيں۔ وہ آئندہ ہفتوں کے دوران يورپی يونين کے دوسرے رکن ممالک سے ان تجاويز پر بات چيت کريں گے اور ان ميں سے اکثر کو اگلے موسم گرما تک نافذ کرانے کی کوشش کريں گے۔ تاہم جرمنی اور فرانس کے سربراہان نےکل اپنی ملاقات ميں يورو بونڈز کی حمايت نہيں کی۔

جرمنی کی سب سے بڑی اپوزيشن پارٹی ايس پی ڈی کے پارليمانی قائد فرانک والٹر اشٹائن مائر نے يورو بونڈز کی حمايت کرتے ہوئے کہا کہ دونوں سربراہان کی تجاويز صحيح رخ پر تو ہيں ليکن وہ قرضوں کے بحران کا مناسب حل نہيں ہيں۔

ادھر عالمی بينک کے صدر نے يورپی حکومتوں سے کہا کہ وہ اصلاحات کے ذريعے معاشی اعتبار کو بحال کريں۔

رپورٹ: ڈانئيلا يُنگ ہاؤس / شہاب احمد صديقی

ادارات: عدنان اسحٰق

DW.COM