1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

يمن سے امريکی سفارتکاروں کے انخلاء کا فيصلہ

امريکہ نے اعلان کيا ہے کہ وہ يمن ميں امريکی سفارتی عملے کے اہل و عيال اور بعض ايسے اہلکاروں کو واپس بلا رہا ہے جن کی وہاں اشد ضرورت نہيں ہے۔

يمنی دار الحکومت صنعاء ميں مظاہرين

يمنی دار الحکومت صنعاء ميں مظاہرين

امريکی وزارت خارجہ نے يہ اعلان يمنی صدر عبداللہ صالح سے اقتدار سے دستبردار ہونے کے جاری مطالبات اور سکيورٹی فورسز اور باغی قبائليوں کے درميان شديد لڑائی کے نتيجے ميں دارالحکومت صنعاء کا ہوائی اڈہ بند ہو جانے کے بعد کيا ہے۔

امريکی وزارت خارجہ کے اس اعلان ميں امريکی شہريوں کو خبردار کيا گيا ہے کہ يمن ميں دہشت گردانہ سرگرميوں اور شہری بد امنی کی وجہ سے امن و امان اور سکيورٹی کو شديد خطرات لاحق ہيں۔ اعلان ميں امريکی شہريوں سے کہا گيا ہے کہ وہ يمن نہ جائيں اور جو امريکی اس وقت يمن ميں ہيں، وہ جب تک ٹرانسپورٹ کی سہو ليات موجود ہيں، اُن سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ملک چھوڑ ديں۔

تجزيہ نگاروں کا کہنا ہے کہ امريکہ يمن ميں سياسی تعطل اورخونريزی کو بڑھتی ہوئی فکر اور ايک طرح سے بے کسی کی حالت ميں ديکھ رہا ہے۔ اُسے اس پر بھی فکر ہے کہ يمن ميں طاقت کے بڑھتے ہوئے خلا کو القاعدہ کے دہشت گرد پُر کر سکتے ہيں۔

صنعاء ميں چيک پوائنٹ پر فوجی

صنعاء ميں چيک پوائنٹ پر فوجی

امريکی صدر اوباما نے کل بدھ کو يمن کے صدر علی عبداللہ صالح سےمطالبہ کيا کہ وہ سعودی عرب اور خليج کے عرب ممالک کے ساتھ کيے گئے اپنے اُس سمجھوتے کی فوری پابندی کريں، جس کے مطابق انہيں 30 دن کے اندر اقتدار سے دستبردار ہونا ہے۔ ليکن صدر صالح نے اس سمجھوتے پر دستخط کرنے کے چند دن بعد ہی يہ ظاہر کر ديا ہے کہ وہ اس پر عمل کرنے کا کوئی ارادہ نہيں رکھتے۔ يمن ميں حکومت مخالف قبائليوں اور سکيورٹی فورسز کے درميان گھمسان کی لڑائی ميں اب تک بھاری جانی نقصان بھی ہو چکا ہے۔

سی آئی اے کے ايک سابق افسر اوراس وقت بروکنگز انسٹيٹيوٹ ميں دہشت گردی سے متعلق امور کے ماہر بروس ريڈل نے کہا ہے کہ يہ امريکہ اوريورپی ممالک کے مفادات کا شديد تقاضا ہے کہ جزيرہ نمائے عرب کے سب سے زيادہ آبادی والے ملک يمن کو ٹوٹنے سے بچايا جائے۔ ريڈل نے خبر ايجنسی اے ايف پی کے ساتھ ايک ای ميل انٹرويو ميں کہا کہ يمن ميں انتشار سے صرف القاعدہ اور شدت پسند گروپوں کو فائدہ پہنچے گا۔ ليکن ريڈل نے يہ بھی کہا کہ واشنگٹن صدر صالح کو اقتدار سے ہٹانے اور جمہوريت کی راہ ہموار کرنے کے سلسلے ميں لاچار ہے۔

يمن کے ايک طاقتور قبيلے کے سردار ايک حکومت مخالف پوليس افسر کے ساتھ

يمن کے ايک طاقتور قبيلے کے سردار ايک حکومت مخالف پوليس افسر کے ساتھ

امريکی وزارت خارجہ کے ايک سينئر افسر نے کہا کہ امريکہ يمن کو ترقی اور فوج کے ليے 300 ملين ڈالرسالانہ کی جو امداد ديتا ہے اسے يمنی صدر پر دباؤ ڈالنے کے ليے استعمال کيا جا سکتا ہے ليکن فی الحال اس کا امکان نہيں ہے۔ وزارت خارجہ کے اس افسر نے کہا کہ ’’فی الحال ہم صدر صالح سے براہ راست بات چيت جاری رکھنے اوران کو اس کا قائل کرنے کی کوشش کر رہے ہيں کہ اُنہيں وہی کرنا چاہيے جو اُن کے عوام کے ليے بہتر ہو۔‘‘

عالمی امن کی کارنيگی فاؤنڈيشن کے ايک تجزيہ نگار کرسٹوفر بيوک نے کہا کہ امريکہ کے پاس يمن کے حالات پر اثر ڈالنے کے ليے بہت کم مواقع ہيں۔ ليکن انہوں نے يہ بھی کہا کہ امريکہ نے ابھی تک ايسا کوئی بالکل واضح اور طاقتور پيغام نہيں بھيجا ہے کہ صدر صالح کو اقتدار سے ہٹ ہی جانا چاہيے اور امريکی قيادت کے پاس اب بھی اس کے ليے طاقت اور اخلاقی قوت ہے۔ مجموعی طور پر امريکہ، مغربی اتحادی اور سعودی عرب مل کر خاصا دباؤ ڈال سکتے ہيں۔ انہوں نے کہا کہ جتنی زيادہ ديرتک يہ صورتحال جاری رہے گی، يمن اتنا ہی زيادہ غير مستحکم ہوتا جائے گا۔ يمنی حکومت اس وقت صرف بر سر اقتدار رہنے ميں دلچسپی لے رہی ہے اور اُسے القاعدہ اور دہشت گردی کی اتنی فکر نہيں ہے۔

ليکن امريکی وزارت خارجہ کے ايک ترجمان مارک ٹونر نے کہا ہے کہ ان کے خيال ميں دہشت گردی کے خلاف جنگ ميں يمنی حکومت کے ساتھ امريکہ کا تعاون جاری ہے۔

رپورٹ: شہاب احمد صديقی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM