1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وینزویلا میں نہیں، طرابلس میں ہوں، معمر قذافی

لیبیا کے رہنما معمر قذافی نے چار دہائیوں پر محیط اپنا دورِ اقتدار برقرار رکھنے کا عندیہ دیا ہے۔ پیر کو رات گئے سرکاری ٹیلی وژن پر ان کا بیان نشر کیا گیا، جس میں انہوں نے ملک سے فرار کی خبروں کی تردید کی۔

default

لیبیا کے رہنما معمر قذافی

معمر قذافی نے ٹیلی ویژن پر دیے گئے بیان میں کہا کہ وہ وینزویلا میں نہیں بلکہ طرابلس میں ہی ہیں۔ قبل ازیں پیر کو ایسی اطلاعات ملیں، جن میں کہا گیا تھا کہ وہ وینزویلا فرار ہو گئے ہیں، جہاں ان کے دوست اوگو چاویز کی حکومت ہے۔

Unruhen in Libyen

ہیومن رائٹس واچ کے مطابق لیبیا میں دو سو سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں

اُدھر لیبیا میں معمر قذافی کی وفادار افواج ان کے اقتدار کو بچانے کے لیے پرتشدد کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ خبررساں ادارے روئٹرز نے دارالحکومت طرابلس میں رہائشیوں کے حوالے سے فائرنگ کی آوازوں کی تصدیق کی ہے۔ روئٹرز کے مطابق ایک تجزیہ کار نے شہر پر جنگی طیاروں کی جانب سے بمباری کی بھی خبر دی ہیں، معمر قذافی کے بیٹے سیف السلام قذافی نے ان خبروں کی تردید کی ہے۔

تاہم مالٹا کے حکام کا کہنا ہے کہ لیبیا کے دو جنگی طیارے ان کے ہاں آ اترے ہیں، جن کے پائلٹس نے کہا ہے کہ انہیں مظاہرین پر بمباری کا حکم دیا گیا تھا۔

انسانی حقوق کے گروپوں اور عینی شاہدین کے مطابق ملک بھر میں سکیورٹی فورسز درجنوں مظاہرین کو ہلاک کر چکی ہیں، جس کی عالمی برادری نے کھل کر مذمت کی ہے۔ امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے کہا ہے کہ خون ریزی کا یہ سلسلہ فوری طور پر بند ہونا چاہیے۔

ہیومن رائٹس واچ نے پانچ روز کے دوران لیبیا میں 233 ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے جبکہ وہاں کے اپوزیشن گروپ یہ تعداد اس سے کہیں زیادہ بتا رہے ہیں۔

Unruhen in Libyen

معمر قذافی کے بیٹے سیف السلام قذافی

دوسری جانب روئٹرز کا کہنا ہے کہ لیبیا کے حوالے سے خبروں کی آزادانہ ذرائع سے تصدیق نہیں ہو پا رہی جبکہ بیرونی دنیا کا لیبیا سے رابطہ بھی مشکل بنا ہوا ہے۔ اُدھر العریبیہ ٹیلی ویژن کا کہنا ہے کہ عسکری اہلکاروں کے ایک گروپ نے ایک بیان جاری کیا ہے، جس میں فوجیوں پر عوام کا ساتھ دینے کا زور دیتے ہوئے قذافی کو ہٹانے کے لیے مدد فراہم کرنے کے لیے کہا گیا ہے۔

لیبیا کے وزیر انصاف مصطفیٰ عبدالجلیل نے مظاہرین کے خلاف طاقت کے استعمال پر احتجاجاﹰ استعفیٰ دیا ہے جبکہ اقوام متحدہ میں لیبیا کے مشن میں شامل سفارت کاروں نے بھی معمر قذافی کو ’جابر‘ قرار دیتے ہوئے فوج پر زور دیا ہے کہ انہیں اقتدار سے ہٹایا جائے۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس