1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ویانا میں پہلے راوٴنڈ کی ووٹنگ بے نتیجہ

بین الاقوامی ادارے برائے جوہری توانائی کے نئے سربراہ کے انتخاب کے لئے آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں پہلے راوٴنڈ کی ووٹنگ بے نتیجہ ثابت ہوئی کیوں کہ کسی بھی امیدوار کو درکار دو تہائی اکثریت حاصل نہیں ہوپائی۔

default

جاپانی سفارت کار یوکیا اَمانو بین الاقوامی ایٹمی ادارے کے نئے سربراہ بن سکتے ہیں

اس ادارے کے بورڈ میں شامل پینتیس رکن ملکوں کے ممبران سیکریٹ ووٹنگ میں حصّہ لے رہے ہیں۔

IAEA in Wien

آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں بین الاقوامی ایجنسی برائے جوہری توانائی کا دفتر اقوام متحدہ کی اسی عمارت کے اندر ہے

66 سالہ محمد البرادئی اس سال بارہ نومبر کو ایٹمی ادارے IAEA کے سربراہ کی حیثیت سے اپنے عہدے سے دستبردار ہورہے ہیں۔ گُذشتہ بارہ برس سے محمد البرادئی بین الاقوامی ایجنسی برائے ایٹمی توانائی IAEA کے سربراہ کی حیثیت سے اپنی پیشہ ورانہ خدمات سرانجام دیتے آرہے ہیں۔

ایٹمی ادارے کا نیا سربراہ بننے کے لئے دو امیدوار ہیں۔ جاپان سے تعلق رکھنے والے Yukiya Amano اور جنوبی افریقہ کے عبدالصمد منتی۔ جاپانی سفارت کار اَمانو اس عہدے کے لئے مضبوط دعوے دار سمجھے جارہے ہیں۔

Abdul Samad Minty

جنوبی افریقہ کے سفارت کار عبدالصمد منتی ایٹمی ادارے کے ڈائریکٹر جنرل کے عہدے کے لئے دوسرے امیدوار ہیں

سفارت کاروں کے مطابق سیکریٹ بیلٹ کے پہلے غیر رسمی راوٴنڈ میں یوکیا اَمانو کے حق میں اکیس جبکہ عبدالصمد کے حق میں چودہ ووٹ پڑے۔ اس ادارے کا سربراہ بننے کے لئے فاتح امیدوار کو کم از چوبیس رکن ملکوں، دوسرے لفظوں میں، چوبیس ووٹوں کی ضرورت ہوتی ہے۔

ووٹنگ کے پہلے مرحلے میں کسی بھی امیدوار کو درکار دو تہائی اکثریت حاصل نہ ہونے کے نتیجے میں جمعہ کو دوسرے مرحلے کی ووٹنگ ہوگی۔ ووٹنگ کے اسی فیصلہ کن مرحلہ کے بعد ہی IAEA کے نئے ڈائریکٹر جنرل کا انتخاب ہوگا۔

جو بھی اس ادارے کا سربراہ بنے گا اس کے سامنے بڑے چیلنجز ہیں۔ ایران کا متنازعہ جوہری پروگرام، شمالی کوریا کا جوہری منصوبہ، شام اور اس کے علاوہ ایسے ممالک جہاں سے جوہری ٹیکنالوجی کے تعلق سے سخت گیر موقف سامنے آتا رہا ہے۔

جوہری ہتھیاروں کی دوڑ ختم کرنے سے متعلق محمد البرادئی کا یہ موقف رہا ہے کہ جوہری طاقت بننے کی خواہش رکھنے والے ملکوں کو تنہا چھوڑنے اور ان پر صرف پابندیاں عائد کرنے کی بجائے معاملات کو سفارت کاری سے حل کیا جانا چاہیے۔

El Baradei scheidet aus dem Amt

محمد البرادئی اس سال نومبر میں ایٹمی ادارے کے سربراہ کی حیثیت سے اپنے عہدے سے دستبردار ہورہے ہیں

’’میرے خیال میں یہ مناسب موقع ہے کہ 1970ء میں طے پانے والے ایٹمی ہتھیاروں کے عدم پھیلاوٴ کے معاہدے پر اس مقصد سے نظر ثانی کی جائے کہ ہماری دنیا جوہری ہتھیاروں سے پاک ہوسکے۔‘‘

البرادئی عالمی طاقتوں پر زور دیتے رہے ہیں کہ وہ ایٹمی ہتھیاروں کے عدم پھیلاوٴ میں اپنا اپنا کردار ادا کریں۔

’’ہمیں جوہری ہتھیاروں کے عدم پھیلاوٴ، جانچ پڑتال اور ایٹمی مواد کی حفاظت کو ہر حال میں یقینی بنانا ہوگا اور نیوکلیئر سپلائی سے متعلق ہمیں مختلف اقوام کی طرف سے یقین دہانیاں بھی درکار ہوں گی۔‘‘

تہران کے متنازعہ جوہری پروگرام کے منصفانہ حل کے حوالے سے محمد البرادئی نے اب تک کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ مغربی ملکوں کا موقف ہے کہ ایران جوہری ہتھیار حاصل کرنا چاہتا ہے لیکن تہران حکومت کا موقف ہے کہ اس کا پروگرام پرامن مقاصد کے لئے ہے۔