1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وکی لیکس کی طرف سے دستاویزات کا اجراء غیر ذمہ دارانہ ہے، پاکستان

پاکستانی دفترخارجہ کے ترجمان عبدالباسط نے ڈوئچے ویلے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وکی لیکس کی طرف سے خفیہ معلومات کے اجراء سے پہلے امریکی حکام نے سرکاری سطح پر ہمیں اعتماد میں لیا تھا۔

default

پاکستان نے وکی لیکس کی جانب سے امریکی خفیہ دستاویزات کے اجراء کی مذمت کرتے ہوئے اسے ایک غیرذمہ دارانہ فعل قرار دیا ہے۔ پاکستانی دفترخارجہ کے ترجمان کے بقول حساس نوعیت کی دستاویزات کا یوں منظر عام پر آنا درست نہیں۔ تاہم ترجمان نے وکی لیکس کی طرف سے جاری کی گئی دستاویزات کے اس حصے کا کریڈٹ بھی لیا جس کے مطابق امریکی دباؤ کے باوجود پاکستان نے اس کے ماہرین کو اپنی جوہری تنصیبات کے معائنے کی اجازت نہیں دی۔ ترجمان نے کہا، "جہاں تک پاکستان کی خارجہ پالیسی کا تعلق ہے وہ ان دستاویزات سے ہی واضح ہو جاتا ہے کہ ہم اپنے قومی مفادات کا تحفظ یقینی بنانے کے اہل ہیں اور ہم نے بھرپور طریقے سے اپنے قومی مفادات کا تحفظ کیا اور آنے والے دنوں اور سالوں میں بھی ہمارا یہی رویہ رہے گا۔"

WikiLeaks / Irak / Screenshot / NO-FLASH

وکی لیکس کی طرف سےاکتوبر میں عراق جنگ سے متعلق چار لاکھ کے قریب دستاویزات جاری کی گئی تھیں

خفیہ دستاویزات کے اس حصہ پر بھی خاصے تبصرے کیے جا رہے جن میں کہا گیا ہے کہ سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ صدر آصف علی زرداری کو پاکستان کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ سمجھتے ہیں۔ اس بارے میں تبصرہ کرتے ہوئے صدارتی ترجمان فرحت اللہ بابر کا کہنا ہے کہ یہ بات پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات خراب کرنے کی کوشش ہے۔ ادھر معروف تجزیہ نگار حسن عسکری کا کہنا ہے کہ دستاویزات کے جن حصوں کو نمایاں کیا گیا ہے وہ زیادہ تر مسلم ممالک کے بارے میں ہیں۔ حسن عسکری کے مطابق، "مسلمان ممالک میں عموماً امریکہ کے لیے ایک منفی رویہ موجود ہے۔ میرے خیال میں ان دستاویزات کے منظر عام پر آنے سے وہ رویہ مزید مستحکم ہوگا۔ اس کے علاوہ اسلامی ممالک کے حکام بلکہ پوری دنیا کے حکام جو امریکہ کی ایمبیسیوں سے گفتگو کرتے ہیں وہ اب زیادہ احتیاط سے کام لیں گے کیونکہ انہیں یہ خطرہ ہو گا کہ ان دستاویزات میں ان افسران کے نام نہ ہوں جن سے امریکیوں نے یہ خبریں حاصل کیں۔"

Wikileaks / Julian Assange / Irak / USA / London

وکی لیکس کے سربراہ جولیان آسانگ کو کئی مقدمات کا سامنا ہے

دوسری طرف بعض حلقے اس بات پر بھی تشویش کا اظہار کر رہے ہیں کہ امریکہ کی طرف سے پاکستان کی دفاعی تنصیبات کے معائنے کی اجازت طلب کرنا ملکی سلامتی کے خلاف ہے۔ تاہم دفاعی تجزیہ نگار جنرل ریٹائرڈ طلعت مسعود کا کہنا ہے کہ یہ امریکی خواہش تو ہو سکتی ہے لیکن پاکستان کو ایسا کرنے سے پہلے اپنے مفاد کو سامنے رکھا ہو گا۔ طلعت مسعود کے مطابق، "امریکہ چونکہ ایک سپر پاور ہے اس لیے اس کی کوشش رہتی ہے کہ ساری دنیا میں اور خاص طور پر ایسے ممالک جہاں وہ سمجھتا ہے کہ اس کے مفادات زیادہ ہیں مثال کے طور پر پاکستان، تو ایسے ممالک میں وہ جاسوسی کا نظام مزید وسیع کر دیتا ہے اس لیے ہمیں اپنے قومی مفادات کو مد نظر رکھتے ہوئے اس عمل کو جتنا کم کر سکیں کرنا چاہیئے۔"

وکی لیکس پرامریکہ کی اڑھائی لاکھ سفارتی دستاویزات کا اجراء کیا گیا ہے اور یہ دستاویزات گزشتہ تین سال کے عرصے پر محیط ہیں اس لیے توقع کی جا رہی ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ان دستاوزیات سے مزید حساس معلومات بھی منظر عام پر آسکتی ہیں۔

رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: افسراعوان

DW.COM

ویب لنکس