1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وکی لیکس: امریکی فوجی پر دشمن کی معاونت کا الزام

امریکی فوج نے اپنے ایک اہلکار پر وکی لیکس کو خفیہ دستاویزات فراہم کرنے کی پاداش میں ’دشمن کو مدد‘ فراہم کرنے کا الزام عائد کر دیا ہے۔ امریکی قانون میں اس جرم کی سزا موت ہے۔

default

بریڈلی میننگ نامی اس اہلکار پر عائد چارج شیٹ کے مطابق اس نے بالواسطہ ذرائع سے دشمن کو انٹیلی جنس معلومات فراہم کیں۔ بریڈلی میننگ عراق میں انٹیلی جنس تجزیہ کار کے طور پر ذمہ داریاں انجام دے چکا ہے۔

امریکی دارالحکومت واشنگٹن میں فوجی ترجمان کیپٹن جان ہیڈرلینڈ نے بتایا کہ نئی چارج شیٹ بریڈلی میننگ کے جرائم کی وسعت کا صحیح طریقے سے احاطہ کرتی ہے۔ فوج کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق میننگ کو سزائے موت دلوانے کی کوشش نہیں کی جائے گی۔ جرم ثابت ہونے کی صورت میں اس 23 سالہ فوجی کو عمر قید کی سزا سنائی جا سکتی ہے۔

امریکی فوج کی جانب سے بریڈلی میننگ پر پہلی بار جولائی 2010ء میں 12 الزامات عائد کیے گئے تھے۔ وہ وفاقی اور عسکری قوانین کی خلاف ورزیوں سے متعلق تھے۔ امریکی محکمہء دفاع نے اب تک میننگ اور وکی لیکس کے تعلق کو واضح نہیں کیا۔ تاہم میننگ کے خلاف چارج شیٹ میں کہا گیا ہے کہ اس امریکی اہلکار نے غیر قانونی طریقے سے اہم حکومتی معلومات ڈاؤن لوڈ کیں اور پھر انہیں انٹرنیٹ پر عام کیا۔

NO FLASH Julian Assange

جولیان اسانج

وکی لیکس نے خفیہ امریکی سفارتی دستاویزات کو عام کرکے واشنگٹن کو سخت ناراض کر رکھا ہے۔ ان دستاویزات کے عام ہونے سے دنیا بھر میں امریکی سفارتی عملے کی معلومات کو محفوظ رکھنے کی صلاحیت پر انگلیاں اٹھیں اور اہم بین الاقوامی امور سے متعلق اعلیٰ حکومتی عہدیداروں کی ذاتی رائے بھی عام ہوئی۔

وکی لیکس کے بانی جولیان اسانج ان دعووں کو مسترد کر چکے ہیں کہ بریڈلی میننگ نے انہیں یہ معلومات فراہم کیں۔ اسانج کے بقول یہ امریکی فوجی ایک ’سیاسی قیدی‘ ہے۔

بریڈلی میننگ کے مقدمے کی سماعت کے لیے تاحال تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا۔ فوجی ذرائع کے مطابق وکلاء صفائی کی درخواست پر بریڈلی میننگ کی ذہنی صحت سے متعلق کرائی گئی انکوائری کے نتائج کا انتظار کیا جا رہا ہے۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس