1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وزیر خزانہ پر ٹیکس چوری کے الزام کے بعد پوری حکومت مستعفی

یورپی یونین کے رکن ملک چیک جمہوریہ میں وزیر خزانہ بابِس پر ٹیکس چوری کے الزام کے بعد وزیر اعظم سوبوتکا نے اپنے سمیت پوری حکومت کے استعفے کا اعلان کر دیا ہے۔ چیک وزیر خزانہ اپنے ملک کے دوسرے امیر ترین بزنس مین بھی ہیں۔

Tschechien | Ministerpräsident Sobotka kündigt seinen Rücktritt an (REUTERS/D. W. Cerny)

وزیر اعظم سوبوتکا، دائیں، ملکی پارلیمان میں وزیر خزانہ بابِس کے ساتھ

چیک جمہوریہ کے دارالحکومت پراگ سے منگل دو مئی کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق وزیر اعظم بوہُوسلاو سوبوتکا نے آج ایک پریس کانفرنس میں اعلان کیا کہ انہوں نے ملکی وزیر خزانہ آندرے بابِس پر لگائے جانے والے مبینہ ٹیکس چوری کے الزامات اور بابِس کے استعفیٰ نہ دینے کے بعد اپنے اور اپنی پوری کابینہ کے مستعفی ہو جانے کا فیصلہ کیا ہے۔

Tschechien | Ministerpräsident Sobotka kündigt seinen Rücktritt an (REUTERS/H. Hanschke)

چیک وزیر اعظم سوبوتکا

بوہُوسلاوسوبوتکا نے کہا کہ وہ اسی ہفتے ملکی صدر میلوس زیمان کے ساتھ ایک ملاقات کریں گے، جس میں سربراہ مملکت کو باقاعدہ طور پر پوری کابینہ کا استعفیٰ پیش کر دیا جائے گا۔

سوبوتکا کا تعلق چیک جمہوریہ کی سوشل ڈیموکریٹک پارٹی سے ہے جو اس وقت اپنی عوامی مقبولت کے لحاظ سے ملک کی دوسری سب سے بڑی پارٹی ہے۔ پہلے نمبر پر وزیر خزانہ بابِس کی سربراہی میں موجودہ مخلوط حکومت میں شامل سینٹر پارٹی اے این او ہے۔ اب تک پراگ میں برسراقتدار حکومت میں یہ دونوں جماعتیں ہی شامل ہیں، جن میں سے ایک کا سربراہ وزیر اعظم اور دوسری پارٹی کا سربراہ وزیر خزانہ ہے۔

چیک جمہوریہ میں اسی سال اکتوبر میں عام انتخابات کرائے جانا ہیں، جن میں توقع ہے کہ سینٹر پارٹی اکیلے ہی اتنی زیادہ عوامی تائید حاصل کر لے گی کہ بابِس کے لیے خود وزیر اعظم بننے کی راہ ہموار ہو جائے گی۔

Andrej Babis (picture-alliance/dpa)

چیک وزیر خزانہ بابِس جو اپنے ملک کے دوسرے امیر ترین بزنس مین بھی ہیں

چیک وزیر خزانہ بابِس کو گزشتہ کچھ عرصے سے ایسے الزامات کا سامنا ہے کہ انہوں نے ایک بزنس مین کے طور پر کئی ایسے کاروباری معاہدے کیے، جن کی وہ تسلی بخش وضاحت نہ کر سکے تھے اور اسی وجہ سے ان پر مبینہ ٹیکس چوری کے الزامات بھی لگائے جا رہے ہیں۔

اس بارے میں چیک وزیر اعظم سوبوتکا نے منگل کے روز کہا کہ وزیر خزانہ، جو مخلوط حکومت میں شامل ہونے کے باوجود سربراہ حکومت کے سیاسی حریف بھی ہیں، پر الزام ہے کہ وہ ماضی میں ٹیکس ادا کرنے سے احتراز کرتے رہے ہیں اور اس بارے میں ان کے دلائل تسلی بخش نہیں ہیں۔ سوبوتکا نے یہ بھی کہا کہ ان کے لیے یہ بات ’ناقابل برداشت‘ ہو چکی ہے کہ آندرے بابِس ابھی تک ملکی وزیر خزانہ کے عہدے پر فائز ہیں۔

دوسری طرف آندرے بابِس نے اپنے خلاف جملہ الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وزیر اعظم نے حکومت کے استعفے کا فیصلہ اس لیے کیا کہ ان کی نظریں اس سال موسم خزاں میں ہونے والے آئندہ عام انتخابات پر ہیں۔ بابِس نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ سوبوتکا اور پوری ملکی کابینہ کے مستعفی ہونے کا فیصلہ محض ایک سیاسی چال ہے۔

DW.COM