1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وزیرستان میں ڈرون حملے، کم از کم 15 افراد ہلاک

پاکستانی قبائلی علاقوں میں ہوئے تین مختلف امریکی ڈرون حملوں کے نتیجے میں کم از کم 15 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ پاکستانی انٹیلیجنس حکام اور مقامی افراد کے مطابق یہ حملے جنوبی اور شمالی وزیرستان میں کیے گئے۔

default

جنوبی وزیرستان کے علاقے وانا کے ایک رہائشی نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ ڈرون طیارے سے عسکریت پسندوں کے مُلا نذیر گروپ کے ایک کمپاؤنڈ پر دو میزائل داغے گئے: ’’ ایک بہت بڑا دھماکہ ہوا اور ہم متاثرہ کمپاؤنڈ سے دھواں اٹھتے ہوئے دیکھ رہے ہیں۔‘‘

عینی شاہدین کے مطابق اسی علاقے میں ایک گاڑی پر بھی دو میزائل فائر کیے گئے۔ جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق ان حملوں میں کم از کم 10 مشتبہ عسکریت پسند ہلاک ہوئے۔ بعدازاں شمالی وزیرستان میں ہوئے ڈرون حملوں کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک ہو گئے۔

امریکہ کی طرف سے حالیہ مہینوں کے دوران افغان سرحد کے قریب پاکستانی قبائلی علاقوں میں ڈرون حملوں میں اضافہ کردیا گیا ہے۔ عام طور پر ایسے حملوں میں شمالی وزیرستان میں واقع عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے۔

گزشتہ کچھ عرصے سے جنوبی وزیرستان میں بھی ڈرون حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے

گزشتہ کچھ عرصے سے جنوبی وزیرستان میں بھی ڈرون حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے

تاہم گزشتہ کچھ عرصے سے جنوبی وزیرستان میں بھی ایسے ڈرون حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

پاکستانی فوج کی طرف سے 2009ء میں جنوبی وزیرستان میں آپریشن کیا گیا تھا، جس کے باعث زیادہ تر عسکریت پسند وہاں سے فرار ہوکر شمالی وزیرستان چلے گئے۔ سکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ اب بہت سے عسکریت پسند دوبارہ جنوبی وزیرستان کا رخ کر رہے ہیں۔ اس کی وجہ امریکی دباؤ کے باعث پاکستانی فوج کا شمالی وزیرستان میں ممکنہ آپریشن ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے مُلا نزیر گروپ کے دو کمانڈروں کے حوالے سے لکھا ہے کہ اس گروپ نے افغانستان میں تعینات امریکی فوج کے خلاف اپنی کارروائیاں تیز کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ ان کمانڈروں کے مطابق اس کی وجہ امریکی ڈرون طیاروں کے بڑھتے ہوئے حملے ہیں۔

رپورٹ: افسر اعوان

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس