1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وزیراعظم نواز شریف کے دورہء لندن پر سوشل میڈیا صارفین کا ردعمل

پاکستانی وزیراعظم نواز شریف کے علاج کے لیے لندن چلے جانے کو پاناما پیپرز میں ان کے بچوں کے نام سامنے آنے کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔ سوشل میڈیا پر وزیراعظم کے اس دورے پر صارفین کا ردعمل ٹرینڈ کر رہا ہے۔

پاکستان بھر میں وزیراعظم نواز شریف کے ایک ایسے وقت پر دورہ لندن روانہ ہونے پر مختلف سوالات اٹھائے جا رہے ہیں کہ جب انہیں اپوزیشن کی طرف سے پاناما پیپرز میں ان کے بچوں کے نام سامنے آنے پر شدید تنقید کا سامنا ہے اور ان سے مستعفی ہونے کے مطالبات کیے جا رہے ہیں۔ اس حوالے سے اہم وہ ٹائمنگ یا وقت بھی ہے، جب یہ اچانک دورہ کیا جا رہا ہے۔ سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ علالت ایک بہانہ ہے دراصل نواز شریف برطانیہ میں سابق صدر اور سب سے بڑی اپوزیشن جماعت پیپلز پارٹی کے سربراہ آصف علی زرداری سے ملاقات چاہتے ہیں۔

پاناما پیپرز میں نواز شریف کی صاحب زادی مریم نواز شریف کا نام بھی شامل ہے۔ بدھ کی صبح مریم نواز شریف نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں نواز شریف کی اپنی والدہ کے ہاتھ چومتے ہوئے ایک تصویر پوسٹ کی، جس میں لکھا تھا، ’’میرے والد میری دادی کے ہاتھ چومتے ہوئے روانگی سے قبل ان سے اپنی صحت کے لیے دعائیں لے رہے ہیں۔‘‘

مریم نواز شریف کی ٹوئٹ کے جواب میں ایک مقامی نشریاتی ادارے سے وابستہ رانا جاوید اپنے ٹوئٹر پیغام میں کہتے ہیں، ’’پاکستان کے منتخب وزیراعظم کی صحت کے لیے دعائیں۔‘‘

ایک پاکستانی صحافی عامر ضیا اپنے ٹوئٹر پیغام میں لکھتے ہیں

پاکستان میں بدھ کے روز بھاگ نواز بھاگ کا ہیش ٹیگ بھی ٹرینڈ کر رہا ہے۔

ایک ٹوئٹر صارف کاشف خان کا کہنا ہے، ’’جیسی عوام ویسے لیڈر، لیکن ان کرپٹ لیڈرز کے بہت برے دن آنے والے ہیں۔‘‘