1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

وزيرستان ميں کارروائی ميں تاخير اچھی’ امريکی حکام

امريکی خفيہ اداروں اور فوجی حکام کے بقول پاکستان اپنے شمال مغربی سرحدی علاقے ميں عسکريت پسندوں کے خلاف کارروائی ميں جس ہچکچاہٹ کا مظاہرہ کررہا ہے اس کا ايک مثبت پہلو بھی ہے۔

default

نيويارک ٹائمز نيوز اسٹينڈ پر

اخبار نيو يارک ٹائمز نے اپنی آج کی اشاعت ميں انکشاف کيا ہے کہ امريکہ پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزيرستان ميں کارروائی نہ کرنے پر پاکستان کے ساتھ بے صبری کا مظاہرہ کررہا ہے۔

Pakistan Süd-Waziristan

جنوبی وزيرستان ميں فوجی کارروائی سے بے گھر ہونے والا ايک خاندان

واشنگٹن ميں تقريباً نصف درجن افسران نے اپنے نام ظاہرکیے بغير اخبار کو بتايا کہ اس کے نتيجے ميں اس علاقے میں جمع ہوجانے والے عسکريت پسندوں پر امريکہ کو ڈرون حملے کرنے کا موقع ملتا ہے۔

نیو یارک ٹائمز نے ايک سینئر امريکی انٹيلی جنس افسر سے يہ الفاظ منسوب کئے ہيں: ’’ايک طرح سے ان کی اکثريت کا شمالی وزيرستان ميں جمع رہنا ہمارے لئے فائدہ مند ہے۔ ظاہر ہے کہ ہمارا يہ منصوبہ تونہيں تھا کہ ان عسکريت پسندوں کو شمالی وزيرستان ميں جمع کيا جائے، ليکن اب صورتحال يہی ہے کہ وہ وہاں ہيں اور ان کے پاس اس کے علاوہ بہت کم ہی دوسرے راستے ہيں۔‘‘

CIA schafft umstrittene Geheimgefängnisse ab Leon Panetta

سی آئی اےکے ڈائريکٹر ليون پينيٹا

ايک اور سينئر امريکی افسر نے کہا کہ امريکہ اسے ترجيح دے گا کہ پاکستانی فوج شمالی وزيرستان ميں کارروائی کرے ليکن عسکريت پسندوں کا بڑی تعداد ميں ايک علاقے ميں جمع ہوجانا کوئی بری بات بھی نہيں ہے۔

پاکستانی صدر آصف زرداری پچھلے ہفتے واشنگٹن گئے تھے، جہاں انہوں نے سی آئی اے کے ڈائریکٹر ليون پينيٹا اور صدر باراک اوباما سے ملاقات کی۔

عسکريت پسند پاکستان کے شمال مغربی علاقے کو افغانستان ميں نيٹو فوج پرحملوں اور اس کی تربيت دينے کے لئے استعمال کررہے ہيں۔ امريکی چیئرمین جوائنٹ چيف آف اسٹاف ايڈمرل مائيک مولن نے حال ہی ميں اس پر زور ديا ہےکہ نيٹو اس وقت تک کامیاب نہیں ہو سکتا، جب تک عسکریت پسندوں کے ان ٹھکانوں کو بند نہیں کیا جاتا۔

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس